Siyasi Manzar
راجدھانی

دہلی شراب پالیسی معاملے میں آخر کار کیجریوال گرفتار

کیجریوال سمیت ان سرکردہ لیڈروں کو جیل بھیج دیا گیا، لوک سبھا انتخابات سے قبل عام آدمی پارٹی کو بڑا دھچکا لگا ہے

21 مارچ 2024 رات 10:56 بجےعام آدمی پارٹی لیڈر کیجریوال قانونی مشکل میں پھنس گئے ہیں۔اروند کیجریوال گرفتاری: لوک سبھا انتخابات سے قبل عام آدمی پارٹی کو بڑا دھچکا لگا ہے۔ انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ نے دہلی شراب پالیسی گھوٹالہ معاملے میں اروند کیجریوال کو گرفتار کر لیا ہے۔ جمعرات یعنی 21 مارچ کو ہائی کورٹ نے گرفتاری پر روک لگانے کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ اروند کیجریوال کی گرفتاری پر روک نہیں لگائی جا سکتی۔ انہیں ای ڈی کے سامنے پیش ہونا پڑے گا۔ جس کے بعد شام کو انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ کی ٹیم ان کی رہائش گاہ پر پہنچی اور تقریباً دو گھنٹے تک جاری رہنے والی تفتیش کے بعد انہیں گرفتار کر لیا گیا۔زیادہ تر رہنماؤں پر قانونی شکنجہ کسا۔ایک طرف ملک میں عام انتخابات ہونے جا رہے ہیں تو دوسری طرف عام آدمی پارٹی کی اعلیٰ قیادت قانونی پریشانیوں کے باعث جیل میں ہے۔ جس میں منیش سسودیا، ستیندر جین، سنجے سنگھ، سومناتھ بھارتی، امانت اللہ خان، سابق وزیر سندیپ کمار، آپ کے مہرولی ایم ایل اے نریش یادو اور اب وزیر اعلی اروند کیجریوال کے نام بھی اس فہرست میں شامل ہو گئے ہیں۔ ایسے میں اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ AAP کا کیا بنے گا؟ کیا اروند کیجریوال کی گرفتاری سے پارٹی کو عوامی ہمدردی ملے گی یا عام آدمی پارٹی کا مستقبل تاریکی میں گم ہو جائے گا۔ ایسے بہت سے سوالات ہیں جو لوگوں کے ذہنوں میں اٹھ رہے ہیں۔ستیندر جیندر، سابق ڈپٹی سی ایم منیش سسودیا اور راجیہ سبھا ایم پی سنجے سنگھ دہلی شراب پالیسی گھوٹالہ کیس میں پہلے ہی جیل میں ہیں۔ اس کے علاوہ دہلی حکومت میں وزیر صحت رہ چکے ستیندر جین بھی منی لانڈرنگ کیس میں تہاڑ جیل میں بند ہیں۔ اے اے پی لیڈر ستیندر جین کو ای ڈی نے مئی 2022 میں مبینہ حوالا لین دین کے الزام میں گرفتار کیا تھا۔ ای ڈی نے ایکسائز پالیسی کیس میں ستیندر جین سے بھی پوچھ گچھ کی تھی۔منیش سسودیادہلی شراب گھوٹالہ معاملے میںسی بی آئی نے 8 گھنٹے کی طویل پوچھ گچھ کے بعد 26 فروری 2023 کو گرفتار کیا تھا۔ منیش سسودیا پر الزام ہے کہ انہوں نے ایکسائز پالیسی کے مسودے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔ جس کے بعد سی بی آئی نے شواہد کو تباہ کرنے کے الزام میں سسودیا کو گرفتار کر لیا۔سنجے سنگھ منیش سسودیا کی گرفتاری کے تقریباً 8 ماہ بعد ای ڈی نے اسی شراب پالیسی گھوٹالہ معاملے میں آپ کے راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ سنجے سنگھ کو گرفتار کیا تھا۔ ان کی گرفتاری سے قبل ای ڈی نے سنجے سنگھ کی رہائش گاہ پر بھی چھاپہ مارا تھا۔ سنجے سنگھ سے ای ڈی نے کئی دنوں تک پوچھ گچھ کی تھی۔ جس کے بعد اسے گرفتار کر لیا گیا۔ ای ڈی کا الزام ہے کہ سنجے سنگھ شراب پالیسی کیس کی ایک اہم کڑی تھے، جن کی موجودگی میں یہ مسودہ تیار کیا گیا تھا اور دلالوں کے ساتھ لین دین ان کی رہائش گاہ پر ہی ہوا تھا۔سو منا تھ بھارتی، جو دہلی حکومت میں وزیر قانون تھے، کو پولیس نے 2015 میں قتل کی کوشش اور گھریلو تشدد کے مقدمات میں گرفتار کیا تھا۔ اس کے بعد، 2021 میں، عدالت نے سومناتھ بھارتی کو سرکاری املاک کو نقصان پہنچانے اور ایمس میں سیکورٹی اہلکاروں پر حملہ کرنے کے معاملے میں 2 سال قید کی سزا سنائی۔امانت اللہ خا ن دوسری جانب عام آدمی پارٹی کے ایم ایل اے امانت اللہ خان فی الحال ضمانت پر باہر ہیں۔ امانت اللہ خان پر دہلی وقف بورڈ کے چیئرمین کی حیثیت سے غیر قانونی بھرتیوں اور مالی خرد برد کا الزام ہے۔ اس کے ساتھ ہی ایک خاتون نے ان پر جنسی طور پر ہراساں کرنے، عصمت دری اور قتل کی دھمکی دینے کا الزام لگایا تھا۔سندیپ کماران سب کے علاوہ سندیپ کمار جو دہلی حکومت میں وزیر تھے، کو سی ڈی سکینڈل میں ملوث ہونے کے بعد برطرف کر دیا گیا تھا۔ سندیپ کمار پر 2016 میں راشن کارڈ بنوانے کے بہانے ایک خاتون کی عصمت دری کرنے کا الزام ہے۔ جس کے بعد انہیں جیل بھیج دیا گیا۔ اس کیس کی ایک سی ڈی بھی سامنے آئی ہے۔ سندیپ کمار خواتین اور بچوں کی بہبود کی ترقی کے وزیر تھے۔
دہلی شراب پالیسی معاملے میں آخر کار کیجریوال گرفتار
وزیر اعلیٰ کیجریوال کو دہلی ہائی کورٹ سے بڑا جھٹکاعام آدمی پارٹی کے اراکین اسمبلی اور وزراء پر سنگین الزامات لگائے گئے ہیں۔ جس کی وجہ سے یا تو یہ سب جیل میں ہیں یا ضمانت پر باہر ہیں۔ ایسے میں اروند کیجریوال کی گرفتاری سے پارٹی کی کشتی درمیان میں پھنس گئی ہے۔ آگے لوک سبھا انتخابات ہیں، اور دوسری طرف ای ڈی-سی بی آئی جس تیزی کے ساتھ اس معاملے میں کارروائی کر رہی ہے، اس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ یہ پارٹی کے لیے اچھے دنوں کے آثار نہیں ہیں۔کیا کہتے ہیں سیاسی ماہرین؟ساتھ ہی سیاسی ماہرین کا ماننا ہے کہ جس طرح سے عام آدمی پارٹی کے لیڈروں پر ایک کے بعد ایک سنگین الزامات لگائے جا رہے ہیں، اس سے پارٹی عوام میں اپنا اعتماد بھی کھو رہی ہے۔ اے اے پی اور اروند کیجریوال جس ایمانداری کا دعویٰ کر رہے تھے وہ محض ایک دکھاوا تھا، پردے کے پیچھے کرپشن کا بڑا کھیل چل رہا تھا۔ جن کی پرتیں اب سامنے آ رہی ہیں۔ ایسے میں پارٹی کا مستقبل کیا ہوگا، یہ تو وقت ہی بتائے گا۔

Related posts

سنجوئے گھوش میڈیا ایوارڈ جیتنے والوں کو چرخہ کے 29 ویں یوم تاسیس پر اعزاز سے نوازا گیا

Siyasi Manzar

انڈین ریلوے لوگوں کو روزگار دینے کا کام کر رہی ہے

Siyasi Manzar

Jamal Siddiqui:تصوف ایک روشنی کی مانند ہے، جو تشدد سے خوف زدہ دنیا کو روشنی دکھا سکتا ہے: جمال صدیقی

Siyasi Manzar

Leave a Comment