Siyasi Manzar
عالمی خبریں

غزہ کے اسپتالوں کا بحران جا ری،”ہزاروں خواتین، بچوں، بیماروں اور زخمیوں کی موت کے خطرے سے دوچار ہیں”

   اسرائیل نے الشفاء پر تیسری رات بھی حملے جاری رکھے ہوئے ہیں

غزہ بھر میں طبی بحران دن بدن سنگین تر ہوتا جا رہا ہے، انڈونیشیا کا اسپتال اپنا آپریشن بند کرنے کو مجبور ہے۔ اسرائیلی فورسز مسلسل تیسرے روز بھی غزہ کے سب سے بڑے طبی مرکز الشفاءاسپتال کے احاطے میں موجود ہیں۔ اسرائیل کے مسلسل حملوں کے ساتھ ساتھ طبی سامان کی شدید قلت کی وجہ سے بہت سے اسپتالوں کی خدمات ختم ہو رہی ہیں۔ اس کے ساتھ ہی اسپتالوں میں مریضوں کے لیے بستر بھی ختم ہو گئے ہیں جس کی وجہ سے بہت سے لوگ اسپتالوں کے فرش پر علاج کروانے پر مجبور ہیں۔ ڈاکٹروں کو بھی دستی طور پر طریقہ کار انجام دینا پڑا کیونکہ ان کے پاس طبی سامان اور آلات ختم ہو گئے ہیں۔
دوسری جانب مریضوں کو کھانا اور پانی بھی میسر نہیں ہے۔ لہٰذا ان کے زخموں کے علاوہ، انہیں بھوک کا بھی سامنا ہے کیونکہ خاص طور پر غزہ پٹی کے شمالی علاقے میں کوئی امداد نہیں پہنچائی گئی ہے۔ خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، رات کے اوائل میں، اسرائیلی فورسز نے شہر اور جنین پناہ گزین کیمپ میں کم از کم سات افراد کو گرفتار کیا اور علاقے کی سڑکوں کو مسمار کر دیا۔ اسرائیلی فائرنگ اور ڈرون حملوں میں متعدد افراد کے زخمی ہونے کی بھی اطلاع ہے، جنہیں علاج کے لیے اسپتالوں میں لے جایا گیا ہے۔
غزہ پر اسرائیلی حملے جاری ہیں، مواصلاتی بلیک آؤٹ کے تحت انکلیو کے ساتھ اہم ٹیلی کمیونیکیشن فراہم کنندہ کے جنریٹرز کے لیے ایندھن ختم ہو گیا ہے۔
غزہ میں وزارت صحت کے ترجمان اشرف القدرہ کا کہنا ہے کہ ”ہزاروں خواتین، بچوں، بیماروں اور زخمیوں کی موت کے خطرے سے دوچار ہیں” جب کہ اسرائیل نے الشفاء پر تیسری رات بھی حملے جاری رکھے ہوئے ہیں۔
الشفاء کےڈائریکٹر نے الجزیرہ کو بتایا کہ شمالی غزہ میں انڈونیشین اسپتال “مکمل طور پر سروس سے باہر” ہے، یہاں تک کہ اس میں مزید ایسے مریضوں کا سامنا ہے جو الشفاء میں طبی علاج حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔
7 اکتوبر سے غزہ پر اسرائیلی حملوں میں کم از کم 11,470 افراد ہلاک ہو چکے ہیں، لیکن اسرائیل کے حملوں کے دوران صحت کے نظام کی تباہی کی وجہ سے یہ اعداد و شمار کئی دنوں سے اپ ڈیٹ نہیں ہو سکے ہیں۔ اسرائیل میں حماس کے حملوں میں سرکاری طور پر مرنے والوں کی تعداد 1200 سے زیادہ ہے۔

Related posts

افریقہ کو G20 کا مستقل رکن بنانے کے لیے پی ایم مودی کا شکریہ۔کینیائی صدر

Siyasi Manzar

بھارت آج تیزی سے ترقی کرنے والی بڑی معیشت ہے۔  ایس جے شنکر S. Jai Shankar

Siyasi Manzar

فوری طور پر جنگ بندی کی جائے اور اس معاملے پر ’فوری طور پر کام شروع کیا جائے: عرب ممالک Israel Hamas War

Siyasi Manzar

Leave a Comment