Siyasi Manzar
عالمی خبریں

یورپی یونین فلسطینی ریاست کو تسلیم کرے: ہسپانوی وزیراعظم

جنیوا،یکم دسمبر( اے یوایس) ہسپانوی وزیرِ اعظم پیڈرو سانچیز نے کہا، یورپی یونین کو فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنا چاہیے کیونکہ اس سے اسرائیل فلسطین تنازعہ کو ختم کرنے اور خطے کو "مستحکم” کرنے میں مدد ملے گی۔سوشلسٹ وزیرِ اعظم نے ہسپانوی پبلک ٹیلی ویڑن ٹی وی ای کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا، "یہ واضح ہے کہ ہمیں اس بحران کے خاتمے کے لیے سیاسی حل تلاش کرنا چاہیے اور اس حل کے لیے میری رائے میں فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے کی ضرورت ہے۔”انہوں نے مزید کہا، "یہ یورپ کے مفاد میں ہے کہ وہ اخلاقی یقین سے اس مسئلے کو حل کرے کیونکہ جو کچھ ہم غزہ میں دیکھ رہے ہیں وہ قابل قبول نہیں،” اور "ایک خطے کو مستحکم کرنے کے لیے ایک جغرافیائی سیاسی مقصد کے لیے بھی۔”اس ماہ جب سانچیز نے نئی مدت کے لیے حلف اٹھایا تو انہوں نے کہا کہ فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے کے لیے یورپ اور اسپین میں کام کرنا” ان کی خارجہ پالیسی کی ترجیح ہو گی۔اگر یورپی یونین کے 27 رکن ممالک کے درمیان اتفاق رائے نہیں ہے تو سانچیز نے کہا ہے کہ میڈرڈ یکطرفہ طور پر فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے سے انکار نہیں کرتا۔مٹھی بھر چھوٹے یورپی بالخصوص مشرقی یورپی ممالک جیسے ہنگری، پولینڈ اور رومانیہ نے یہ قدم اٹھایا ہے جنہوں نے یورپی یونین میں شامل ہونے سے پہلے ایسا کیا تھا۔لیکن اب تک بلاک کے کسی بڑے رکن نے یہ اقدام نہیں کیا ہے جو اسپین کو ایک سرخیل بنا دے گا۔اسپین کی پارلیمنٹ نے 2014 میں ایک قرارداد کے حق میں ووٹ دیا تھا جس میں فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔تاہم ووٹ غیر پابند تھا اور کوئی مزید اقدام نہیں ہوا۔سانچیز نے ٹی وی ای کو بتایا، "صورتحال بدل گئی ہے۔” اور مزید کہا کہ عرب ممالک نے یورپی یونین کی پوزیشن کو نہیں سمجھا۔انہوں نے اسرائیلی بستیوں کی تعمیر کے حوالے سے مزید کہا، "ان تمام سالوں کے دوران ہم نے دیکھا ہے کہ کس طرح اسرائیل فلسطینی سرزمین پر منظم طریقے سے قابض ہو گیا ہے۔”ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق: "اسرائیل کی اپنے شہریوں کو مقبوضہ فلسطینی علاقے میں آباد کرنے اور مقامی آبادی کو بے گھر کرنے کی پالیسی بین الاقوامی انسانی قانون کے بنیادی اصولوں کی خلاف ورزی ہے۔”فلسطینی کہتے ہیں کہ ان بستیوں سے مغربی کنارے اور غزہ کی پٹی میں ایک ریاست کا مقصد خطرے میں پڑ گیا ہے جس کا دارالحکومت مشرقی یروشلم ہو۔سانچیز نے گذشتہ جمعہ کو غزہ اور مصر کے درمیان رفح سرحدی گذرگاہ کے دورے کے دوران غزہ پر اسرائیلی تشدد پر تنقید کی تھی جس پر اسرائیل نے گذشتہ ہفتے اسپین کے سفیر کو طلب کیا تھا۔اسرائیل نے میڈرڈ پر "دہشت گردی” کی حمایت کرنے کا الزام لگایا۔سانچیز نے 7 اکتوبر کو اسرائیلی شہریوں اور فوجیوں پر حماس کے حملے کی واضح الفاظ میں مذمت کی تھی، یہ بات یاد دلانے سے پہلے انہوں کہا، "دوستانہ قوموں کو سچ بولنا چاہیے۔”انہوں نے مزید کہا، "لیکن ہمیں اسرائیل کو اسی یقین کے ساتھ بتانا چاہیے” کہ اسے بین الاقوامی قانون کا احترام کرنا چاہیے۔دن کے آخر میں اسرائیل نے اسپین کے سفیر کو سرزنش کے لیے طلب کیا جب سانچیز نے کہا انہیں شک ہے کہ اسرائیل غزہ کی پٹی میں بین الاقوامی انسانی قانون کا احترام کر رہا ہے۔اسرائیلی وزیرِ اعظم بینجمن نیتن یاہو نے کہا "اسپین کے وزیر اعظم کے اسی دن کے شرمناک بیان کے بعد کہ حماس کے دہشت گرد ہمارے دارالحکومت یروشلم میں اسرائیلیوں کو قتل کر رہے ہیں،” انہوں نے اپنے وزیرِ خارجہ کو ہدایت کی کہ وہ ہسپانوی سفیر کو سرزنش کے لیے طلب کریں۔جمعرات کی صبح رش کے وقت یروشلم کے ایک بس اسٹاپ پر حماس کے دو مزاحمت کاروں نے تین افراد کو ہلاک کر دیا۔

Related posts

سعودی عرب کا G20 سربراہ اجلاس کے موقع پر غزہ میں فوری جنگ بندی کا مطالبہ

Siyasi Manzar

افریقہ کو G20 کا مستقل رکن بنانے کے لیے پی ایم مودی کا شکریہ۔کینیائی صدر

Siyasi Manzar

سعودی ولی عہد سے امریکی وزیرخارجہ کی ملاقات

Siyasi Manzar

Leave a Comment