Siyasi Manzar
Top News راجدھانی

دہلی پردیش کانگریس کے صدر اروند سنگھ لولی نے تینوں امیدواروں کا کرایا تعارف ،کہا تینوں امیدوار عوامی لیڈر اور ہردلعزیز ہیں

دہلی سے جئے پرکاش اگروال،ڈاکٹر ادت راج اور کنہا کمار ہوں گے کانگریس کے امیدوار

ایازاحمدخان
نئی دہلی، 22 اپریل (ایس ایم نیوز ) دہلی پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر ارویندر سنگھ لولی نے آج ریاستی دفتر میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں لوک سبھا انتخابات 2024 کے لیے دہلی سے کانگریس کے تین امیدواروں کا اعلان کیا، چاندنی چوک سے جئے پرکاش اگروال۔ لوک سبھا سیٹ، نارتھ ویسٹ نے دہلی سے ڈاکٹر ادت راج اور شمال مشرقی دہلی سے مسٹر کنہیا کمار کا تعارف کرایا اور انتخابات میں پارٹی کی ترجیح بتائی۔ انہوں نے کہا کہ جہاںجئے پرکاش اگروال دہلی کے سینئر لیڈر اور سابق ریاستی صدر ہیں، وہیں ڈاکٹر ادت راج ایک بڑے دلت لیڈر ہیں، جو دلتوں کے حقوق کے لیے آواز سے اٹھاتے رہے ہیں۔ ڈاکٹر ادت راج 2014 میں نارتھ ویسٹ لوک سبھا سیٹ سے ایم پی بھی رہ چکے ہیں اور نارتھ ایسٹ لوک سبھا سیٹ سے کنہیا کمار جے این یو اسٹوڈنٹس یونین کے صدر رہ چکے ہیں اور بی جے پی کی آمریت کے خلاف اپوزیشن کی جنگ لڑ رہے ہیں۔

مسٹرلولی نے کہا کہ گزشتہ 10 سالوں میں بی جے پی کی غلط حکمرانی اور غلط پالیسیوں کی وجہ سے دہلی سمیت پورے ملک کے لوگ بھگت رہے ہیں۔ بی جے پی کے دور حکومت میں ملک میں بے روزگاری کا 45 سال کا ریکارڈ ٹوٹ گیا ہے۔ غریب غریب تر اور سرمایہ دار امیر تر ہوتا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی کے دور میں خواتین کے خلاف ظلم عروج پر ہے۔ دہلی میں بی جے پی کے ممبران پارلیمنٹ نے مفاد عامہ کے لیے کوئی کام نہیں کیا اور ناکارہ ثابت ہوئے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس کے تینوں لوک سبھا امیدوار اس الیکشن میں بے مثال جیت حاصل کریں گے۔پریس کانفرنس میں ریاستی صدر ارویندر سنگھ لولی کے ساتھ سابق ریاستی صدر اور الیکشن مینجمنٹ اینڈ کوآرڈینیشن کمیٹی کے چیئرمین سبھاش چوپڑا، لوک سبھا سیٹوں سے کانگریس کے امیدوار شری جئے پرکاش اگروال، ڈاکٹر ادت راج اور کنہیا کمار، سابق ایم ایل اے۔ کمیونیکیشن ڈپارٹمنٹ کے چیرمین جناب انیل بھاردواج، کارپوریشن کے انچارج جناب جتیندر کمار کوچر اور کمیونیکیشن ڈپارٹمنٹ کے وائس چیرمین جناب انوج اتریہ بھی موجود تھے۔ جناب سبھاش چوپڑا نے اس اہم موقع پر آنے والے صحافیوں کا شکریہ ادا کیا۔
شری جئے پرکاش اگروال نے کہا کہ کانگریس پارٹی نے مجھے دس بار الیکشن لڑنے کا موقع دیا ہے اور آٹھویں بار چاندنی چوک سے الیکشن لڑنے کا موقع دیا ہے۔ سماجی کارکن ہونے کے علاوہ میں چاندنی چوک کے علاقے کا ووٹر بھی ہوں۔ انہوں نے کہا کہ چاندنی چوک دہلی کا دل ہے اور یہاں رہنے والا ہر شخص خواہ وہ غریب ہو، امیر ہو، متوسط طبقہ ہو، سڑک کے بیچنے والے، مزدور، تاجر، دکاندار، مقامی باشندے، میرا خاندانی رشتہ ہے۔ گزشتہ 10 سالوں سے بی جے پی کے ارکان پارلیمنٹ نے پارلیمنٹ میں عوام کے لیے ایک لفظ بھی نہیں بولا اور سارا وقت خاموش رہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کی اپنی حکومت ہونے کے باوجود انہوں نے اپنے حلقے کے حق میں 1000 سے زیادہ سوالات پوچھے لیکن پارٹی نے انہیں کبھی غلط ثابت نہیں کیا کیونکہ کانگریس میں جمہوری حقوق اور اظہار رائے کی آزادی حاصل ہوتی ہے۔ بی جے پی کبھی کبھی بازار بدلنے کی بات کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کو بی جے پی کے جھوٹ کے پوٹلی سے گمراہ ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔ لوک سبھا الیکشن جیتنے کے بعد میں سماج کے ہر طبقے کے مسائل کو پارلیمنٹ میں اٹھاؤں گا۔
ڈاکٹر ادت راج نے کہا کہ 2014-19 میں میں شمال مغربی دہلی کا ایم پی تھا۔ کراری اور نریلا ریلوے انڈر پاس کے لیے رقم منظور کی گئی لیکن اگلے 5 سالوں میں موجودہ رکن اسمبلی کام شروع بھی نہ کر سکے۔ میں نے میٹرو کو بوانہ، قطب گڑھ اور نریلا تک پھیلانے کی تجویز تیار کی تھی لیکن بی جے پی ایم پی کی بے حسی کی وجہ سے کیا اس کے لیے میٹرو کو دہلی دیہات تک نہیں پہنچنا چاہیے تھا؟ میں نے نریلا علاقہ کو پھر سے جوان کیا، یہاں پر فلائی اوور، این آئی ٹی، پولی ٹیکنیکل، کیندریہ ودیالیہ اور کالج کی عمارتوں کی تعمیر جیسے ترقیاتی کام کئے۔ انہوں نے کہا کہ میں نے کراری اسمبلی میں اسکول، کالج، تعلیمی اداروں اور فلاحی کاموں کے لیے 55 ایکڑ زمین الاٹ کی تھی، جس میں بی جے پی نے پچھلے پانچ سالوں میں ایک فیصد بھی کام نہیں کیا۔ میں پچھلے پانچ سالوں سے شمال مغربی دہلی کے لوگوں کے لیے مسلسل کام کر رہا ہوں اور اس عرصے میں میں نے 95 فیصد لوگوں کے لیے کام کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں راہل جی اور کھرگے جی کے مشن پر توجہ مرکوز کرکے کام کرنا ہوگا اور انتخابات جیتنے کے بعد ہم نوجوانوں، خواتین، مزدوروں کی پانچ ضمانتوں اور وطن عزیز کے مفادات کے لیے شرکت کی 25 ضمانتوں کو فوری طور پر نافذ کریں گے۔
کنہیا کمار نے کہا کہ اتحاد کے معاہدے کے مطابق کانگریس راجدھانی کی تین سیٹوں پر الیکشن لڑ رہی ہے، جن میں سے انہیں شمال مشرقی دہلی سے امیدوار بنایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج مہنگائی نے عوام کا جینا دوبھر کر رکھا ہے، بے روزگاری تاریخی ریکارڈ توڑ رہی ہے، فی کس جی ڈی پی شیئر کم ہو رہا ہے جس کی وجہ سے امیری اور غربت میں فرق روز بروز بڑھ رہا ہے، عوام کی روزمرہ کی اشیاء خریدنے کی طاقت کمزور ہوتی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی حکومت نے 70 سالوں میں ملک کا 55 لاکھ کروڑ روپے کا قرض کم کر کے 150 لاکھ کروڑ روپے کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے انتخابی بانڈز کے ذریعے کاروبار کو لوٹا ہے اور بی جے پی تقسیم کرو اور حکومت کرو کی سیاست کر رہی ہے تاکہ نسل کو ذات کے خلاف اور مذہب کو مذہب کے خلاف بنا کر برطانوی پالیسی کو معنی خیز بنایا جا سکے۔شری کنہیا کمار نے کہا کہ مرکز میں حکومت بنانے کے بعد ہم دہلی کی تمام سات سیٹوں پر ایک مثبت ایجنڈے کے لیے کام کریں گے اور تعلیم یافتہ نوجوانوں اور خواتین کو سالانہ ایک لاکھ روپے دیں گے۔ منریگا کے مطابق شہروں میں نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کیے جائیں گے۔ خواتین کے تحفظ، کسانوں کے حقوق اور محنت کش طبقے کے مفادات کے تحفظ کے لیے قانون بنائے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی نے 10 سالوں میں عوام کے لیے کچھ نہیں کیا۔ کراول نگر میں ٹریفک کا نظام درہم برہم ہے اور سڑکوں کی حالت انتہائی خراب ہے، کوئی ترقیاتی کام نہیں ہوا۔ انہوں نے کہا کہ کسی کو بھی بی جے پی کے گمراہ کن اور دھوکہ دہی کے نعرے کا شکار نہیں ہونا چاہئے۔ ہم کمیونٹی کے ہر طبقے کے حقوق کے تحفظ کے لیے کام کریں گے۔

Related posts

Jamal Siddiqui BJP:عوام سے لوٹی گئی ایک ایک پائی واپس کرنی ہوگی، یہ مودی کی گارنٹی ہے: جمال صدیقی

Siyasi Manzar

اے ایم یو کے نئے وائس چانسلر کے پینل بننے پر استقبال : ارشاد احمد

Siyasi Manzar

پہلے مرحلے میں 102 سیٹوں کی ووٹنگ اختتام پذیر

Siyasi Manzar