Siyasi Manzar
مضامین

بوکھلاہٹ بتارہی کہ زمین کھسک رہی ہے

’’بھارتیہ سنسکرتی‘‘ کی دہائی دینے والے گالیوں پر اتر آئے

عبدالغفارصدیقی


انتخابات کا دوسرا مرحلہ مکمل ہوا۔ اس میں بھی موجودہ مرکزی حکومت میں شامل جماعتوں کو نئے اتحاد کی جانب سے سخت مقابلہ کا سامنا کرنا پڑا۔بعض تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ پہلے مرحلہ کی طرح دوسرے مرحلہ میں بھی بی جے پی کو سخت نقصان اٹھانا پڑسکتا ہے ۔ووٹرس کو بیدار کرنے کی ساری کوششیں رائگاں گئیں اور ساٹھ فیصد سے بھی کم رائے دہندگان نے اپنے ووٹوں کا استعمال کیا ۔اس میں بھی مسلم پولنگ بوتھوں کی شرح دیگر کے مقابلہ زیادہ ہے ۔اس سے بھی یہ گمان لگایا جارہا ہے کہ حکومت سے ناراض ووٹرس ووٹ ڈالنے ہی نہیں آئے ۔کم ووٹنگ کا مطلب ہے کہ عوام کا اعتماد مجروح ہوا ہے۔پہلے مرحلہ کے ایگزٹ پول کو دیکھ کر حکمراں جماعت کے ہوش اڑ گئے تھے اور ان کی قیادت میں بوکھلاہٹ صاف دکھائی دے رہی ہے ۔اسی بوکھلاہٹ کا نتیجہ ہے کہ سنگھ سرچالک نے سنگھ کے سو سال مکمل ہونے پر صدی تقریبات نہ منانے کا اعلان کردیاجس کی تیاری وہ کئی سال سے کررہے تھے ۔
ملک میں موجودہ انتخابات کا سلسلہ آزادی کے بعد سے شروع ہوا ۔انتخابی جلسوں میں ہر جماعت اپنی بات عوام کے سامنے رکھتی رہی ہے ،اس کے لیے وہ اپنا منشور شائع کرتی ہے،ڈور ٹو ڈور جا کر بات کرتی ہے اور بڑے انتخابی جلسوں اور ریلیوں کے ذریعہ عوام تک پہنچنے کی کوشش کرتی ہے ۔ماضی میں انتخابات عوامی ایشوز بے روزگاری ،بھک مری ،بنیادی سہولیات کے فقدان وغیرہ پر لڑے جاتے تھے ۔جب سے بی جے پی نے اس میدان میں قدم رکھاہے اس نے انتخابات کو مذہبی رنگ دے دیا اورعوام کے مذہبی جذبات سے کھلواڑ کیا ۔ایک مدت تک رام مندر اور بابری مسجد کا ایشو ان کے پاس رہا ۔جب یہ قضیہ ایک غیر منصفانہ فیصلہ کے نتیجہ میں ہاتھ سے نکل گیا تو طلاق ،حلالہ اور کشمیر کے ایشوز پر عوام کو گمراہ کرکے ووٹ حاصل کیے گئے ،مگر حسن اتفاق کہ موجودہ انتخابات میں یہ مسائل بھی حل ہوچکے ہیں ۔حکومت سمجھتی تھی کہ عوام مندر کی تعمیر اور اس کاشاندارافتتاح ہوجانے کے بعد عوام اس کو جھولی بھر کر ووٹ دے گی مگر ایسا کچھ نہیں ہوا ۔ملک میں بڑھتی بے روزگاری اور مہنگائی نے عوام کی کمر توڑ کر رکھ دی ۔عوام نے سمجھ لیا کہ موجودہ حکومت کے پاس ترقیاتی کاموں کی کوئی فہرست نہیں ہے جن کی بنیاد پر وہ عوام سے اپنے لیے ووٹ مانگ سکے ۔ظاہر ہے جب کوئی کام ہوا ہی نہیں تو فہرست کہاں سے آئے گی ۔اس نے تو اپنے مخالفین کو موت کے گھاٹ اتار کر یا جیلوں میں بند کرکے انتخابی جنگ جیتنا چاہی مگرپہلے مرحلہ کی پولنگ نے یہ ثابت کردیا کہ اس میں بھی اسے کامیابی نہیں ملی۔اس لیے اب اس نے مسلمانوں کو گالیاں دینا شروع کردیں ،وہ سمجھتی ہے کہ کہ گالیاں کھاکر مسلمان سڑکوں پر اتر آئیں گے ،مسلم لیڈر شپ جواباً کچھ ایسا کہے گی جس کے نتیجہ میں ہندو غصہ میں آکر بی جے پی کے حق میں ووٹ کریں گے ۔مگر مسلم قیادت کی ہوش مندانہ خاموشی نے ان تمنائوں پر بھی پانی پھیر دیا ہے اور بقول غالب:
کتنے شیریں ہیں تیرے لب کہ رقیب
گالیاں کھاکے بے مزہ نہ ہوا
حیرت کی بات یہ ہے کہ ملک کے وزیر اعظم اپنے خطابات میں جو زبان استعمال کررہے ہیں ان کی کسی مہذب انسان سے توقع نہیں کی جاسکتی ۔ایک تعلیم یافتہ اور ملک کے عظیم منصب پر فائز شخص ایسے جملے نہیں بول سکتا ۔نہ بھارتیہ سنسکرتی اس کی اجازت دیتی ہے جس کی وہ دہائی دیتے ہیں،بار بار سب کا ساتھ اور سب کا وکاس کا نعرہ لگانے والے اور ملک کی ایک سو چالیس کروڑ عوام کو اپنا پریوار کہنے والے سے یہ امید نہیں تھی کہ وہ پریوار کو آپس کو میں لڑانے کا کام کرے گا۔وزیر اعظم نے جو بیانات دیے ہیں ان کے نتیجہ میں فرقہ وارانہ فسادات بھی ہوسکتے تھے ،اور مسلمانوں کی لنچنگ میں بھی اضافہ ہوسکتا تھا ،مگر داد دیجیے ہوش مند عوام کو کہ انھوں نے ان بیانات کو ’’دیوانے کی بڑ‘‘ سمجھ کر ردی کی ٹوکری میں ڈال دیا ۔بطور سند بیانات بھی ملاحظہ کرلیجیے۔
وزیر اعظم نے کہا:’’ اگر حزب اختلاف کی جماعت کانگریس اقتدار میں آئی تو وہ لوگوں کی دولت کو ’در اندازوں‘ اور ’بہت سے بچہ‘ پیدا کرنے والوں میں تقسیم کر دیں گے۔بقول ان کے ’کانگرس کا منشور ہے کہ وہ ملک بھر سے لوگوں سے ان کے اثاثے لے کرعوام میں برابر تقسیم کریں گے۔‘‘(جب کہ مودی جی یہ اثاثے اپنے دوستوں کو دے رہے ہیں)مودی جی نے دعوی کیا کہ کانگرس پہلے حکومت میں کہہ چکی ہے کہ ہندوستان کے اثاثوں پر مسلمانوں کا حق ہے۔’ ’اس لیے اس کا مطلب ہوا کے وہ یہ اثاثے لے کر انھیں بانٹیں گے جن کے زیادہ بچے ہیں اور ’گھس بیٹھیوں‘ میں بانٹیں گے۔‘‘(حالانکہ کانگریس نے نہ ایسا کہا اور نہ ایسا وہ سمجھتی ہے ،اگر ایسا ہوتا تو اس کے ساٹھ سالہ دور حکومت میں مسلمانوں کو دیوار سے لگانے کا کام نہ ہوتا)۔مودی جی نے غیر مسلم بہنوں کو مسلمانوں کا دشمن بنانے کے لیے فرمایا: کہ ’’میری ماؤں اور بہنوں یہ اربن نسل کی سوچ آپ کا منگل سوتر بھی محفوظ رہنے نہیں دے گی۔‘‘ایک انتخابی جلسے میں مودی جی نے کہا کہ ’’ کانگریس کو اورنگ زیب کے مظالم یاد نہیں ہیں جس نے سیکڑوں مندر توڑے ‘‘۔
موصوف کے نقش قدم پر چلتے ہوئے اترپردیش کے قابل احترام وزیر اعلیٰ جو اتفاق سے یوگی ہیں اور جنھیں دنیا سے کوئی لینا دینا نہیں ہے ،انھوں نے بھی مودی جی کے بیانات کو نقل کیا اور یہاں تک کہہ دیا کہ :’’ کہ کانگرس ملک میں شرعی قانون لانا چاہتی ہے کانگرس بہنوں اور بیٹیوں کی جائیداد لوٹ کر بندروں میں بانٹ دے گی کانگرس ملک میں طالبان راج لانا چاہتی ہے۔‘‘ ایک دوسری جگہ موصوف نے فرمایا‘’’ کہ کانگرس اقلیتوں کو اپنی پسند کا کھانا کھانے کی آزادی دینا چاہتی ہے یعنی گائے ذبیحہ کی آزادی دینے کی بات کر رہے ہیں یہ بے شرم لوگ ہماری گائے کو کھانے دیں گے جبکہ ہمارا مذہب گائے کو دنیا کی ماں کہتا ہے۔ وہ اس گائے کو قصابوں کے حوالے کر دیں گے۔ کیا بھارت اسے کبھی قبول کرے گا ؟‘‘۔
ان دونوں رہنمائوں کے بیانات صاف بتارہے ہیں کہ زمین کھسک رہی ہے اور انتخابات کے نتائج ان کے خلاف جانے والے ہیں ۔میں سمجھتا ہوں کہ بھارت کی عوام اب اتنی بے وقوف نہیں رہی ہے کہ ان بیانات کے مقاصد کو نہ سمجھ سکے ۔وہ جانتی ہے کہ کانگریس نے اپنے ساٹھ سالہ اقتدار میں مسلمانوں کو زخموں کے سوا کچھ نہیں دیا تو اب کیا دے گی ۔موجودہ دور میں بھی جہاں جہاں اس کی حکومتیں ہیں وہاں بھی وہ کچھ نہیں دے رہی ہے ۔موجودہ حکومت سے یہ سوال کیا جانا چاہئے کہ گزشتہ دس سال سے آپ حکومت میں ہیں اور تمام سرکاری ذرائع واختیارات کو قانونی و غیر قانونی استعمال کررہے ہیں اس کے باوجود بھی آپ ہماری غیر مسلم بہنوں کے منگل سوتر تک کی حفاظت نہیں کرسکے ہیں اور یہ ڈر دکھا رہے ہیں کہ اگر خدانہ خواستہ اقتدار کی کرسی پر کانگریس اور اس کے اتحادی براجمان ہوگئے تو ان کا منگل سوتر چھن جائے گا ،ان کی زمینیں اور جائدادیں لوٹ لی جائیں گی ۔آزادی کے بعد سے اب تک کوئی ایک واقعہ بھی کسی جگہ منگل سوتر کے چھین لیے جانے کا پیش نہیں آیا تو آپ کس بنیاد پر یہ بات کہہ رہے ہیں ؟گائے کے تحفظ پر اربوں روپے خرچ کرنے کے بعد بھی آپ اس کی حفاظت نہیں کرپارہے ہیں تو آپ کو اقتدار میں رہنے کا حق کس طرح پہنچتا ہے ؟یہ بھی بتادیجیے کہ مرکز کے زیر انتظام بعض علاقوں میں گائوکشی کی اجازت کس نے دے رکھی ہے ؟جنوب میں جب آپ انتخابی مہم چلاتے ہیں تو کیوں گائے کے ذبیحہ پر پابندی کی بات نہیں کرتے ؟ملک میں بیف ایکسپورٹ کرنے والوں کا تعلق کس سیاسی جماعت سے ہے ؟
بی جے پی چاہتی ہے کہ ملک میں بدامنی پھیلے ،یہاں کی عوام مذہب کی بنیاد اور مذہبی ایشوز پر دست بگریباں ہوں اور ہم حکومت کرتے رہیں ۔لیکن جس ملک کی عوام اپنے لیے دوروٹی مہیا کرنے میں مصروف ہو،جس کا نوجوان روزگار کے لیے سڑکوں پر دھکے کھارہا ہو،جس کے مریض اسپتالوں میں تڑپ تڑپ کر جان دے رہے ہوں ،وہاں کے لوگوں کے پاس اتنا وقت کہاں ہے کہ آپ کی بے بنیاد باتوں پر یقین کرکے آپس میں لڑیں اور اپنے بچوں کے مستقبل کو غیر محفوظ بنائیں۔
دس سال حکومت کرنے کے بعد بھی آپ کے پاس قابل ذکر کارنامے نہیں ہیں جن کو آپ فخر سے بیان کرسکتے ۔اس لیے آپ کانگریس کو اور مسلمانوں کو گالیاں دینے پر اتر آئے ۔آپ جتنی چاہے گالیاں دیں اور جتنا چاہے جھوٹ بولیں ،اب ہندوستانی عوام نے عہد کرلیا ہے کہ وہ آپس میں نہیں لڑیں گے ۔وطن عزیز میں ہم سب ایک ساتھ رہتے ہیں ،ایک ساتھ رہیں گے ۔ہندو بہنیں جانتی ہیں کہ ان کا منگل سوتر کون چھین رہا ہے ،جب آپ نے اقتدار سنبھالا تھا اس وقت سونے کی قیمت 28ہزار روپے فی دس گرام تھی اور سونا بھی اصلی تھا اس وقت اس کی قیمت 78ہزار ہے اور سونے کی بھی کوئی گارنٹی نہیں ،آپ نے منگل سوتر خریدنے لائق ہی نہیں چھوڑا ۔اب معصوم بچے بھی مائوں کے یہ کہنے سے کہ ’’ سوجا نہیں تو بلی کھاجائے گی ‘‘ نہیں ڈرتے ،یہ تو بالغ عمر اور بالغ نظر ووٹرس ہیں یہ آپ کی گیدڑ بھبھکیوں میں آنے والے نہیںہیں ۔اکثریت کو اقلیت خوف دکھا کر کب تک ووٹ بٹورتے ہیں گے؟

Related posts

احساس مرتا ہے تو غیرت بھی مر جاتی ہے

Siyasi Manzar

کھلے عام موت کی دعوت دیتی بجلی کی ترسیلی لائنیں

Siyasi Manzar

اتراکھنڈ حکومت کا یکساں سول کوڈ ایک سیاسی چال اور متاکشرا اسکول کے پیروکاروں کیلئے نقصاندہ

Siyasi Manzar