Siyasi Manzar
قومی خبریں

Bihar Special Status:وزیر اعظم مودی نے پھرکیوں وعدہ کیاتھا…، خصوصی درجہ کو لے کر بہار میں سیاست تیز تیجسوی یادو نے مرکز کو گھیر ا

  • بہار میں خصوصی درجہ کو لے کر سیاست تیز ہو گئی ہے۔ ڈپٹی سی ایم تیجاشوی نے کہا کہ اگر خصوصی درجہ کی فراہمی کو ختم کر دیا گیا ہے تو پھر وزیر اعظم نریندر مودی نے 2015 کے اسمبلی انتخابات میں بہار کو خصوصی درجہ یا خصوصی پیکیج دینے کا وعدہ کیوں کیا تھا۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ بہار ملک کی پہلی ریاست ہے جس کے پاس اپنی پوری آبادی کا سائنسی ڈیٹا ہے۔
    بہار کا مطالبہ: اگر مرکز ریزرویشن سے راضی ہے تو اسے نویں شیڈول میں شامل کریں، ریاست کو خصوصی درجہ دیں،مرکز خصوصی درجہ دے یا نہ دے، کم از کم اس پر اپنی رائے ضرور دیں: تیجاشوی

    پٹنہ،23 نومبربہار کی خصوصی حیثیت بہار حکومت نے جمعرات کو مرکز سے دو ٹوک الفاظ میں کہا کہ اگر وہ ریاست کے نئے ریزرویشن قانون سے اتفاق کرتی ہے تو اسے فوری طور پر اسے آئین کے نویں شیڈول میں شامل کرنا چاہیے۔ بہار کو خصوصی ریاست کا درجہ دیں، کیونکہ ذات پات کی بنیاد پر ہونے والی مردم شماری سے پہلے نیتی آیوگ کی رپورٹ میں بھی تسلیم کیا گیا ہے کہ ریاست میں غربت کی لکیر سے نیچے کی آبادی تقریباً 34 فیصد ہے۔ توانائی کے وزیر بجیندر پرساد یادو نے ان عوامل کی گنتی کی جن کی بنیاد پر بہار خصوصی درجہ کا مستحق ہے۔
    نائب وزیر اعلی تیجسوی یادو، وزیر توانائی بجیندر پرساد یادو، وزیر خزانہ و پارلیمانی امور وجے کمار چودھری، عمارت کی تعمیر کے وزیر اشوک چودھری، حیوانات اور ماہی پروری کے وزیر آفاق عالم اور پسماندہ-انتہائی پسماندہ بہبود کی وزیر انیتا یادو بھی موجود تھیں۔ جمعرات کو چیف سیکرٹریٹ میں منعقدہ مشترکہ پریس کانفرنس میں دیوی نے یہ مطالبہ کیا۔
    وزراء نے کہا کہ ہم مرکز سے خصوصی درجہ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ اس کے لیے ہم عوام کے درمیان بھی جائیں گے۔ تیجاشوی نے کہا کہ بہار ملک کی پہلی ریاست ہے جس کے پاس پوری آبادی کا سائنسی ڈیٹا موجود ہے۔ نتیش کمار کی قیادت والی حکومت ذات پات کی بنیاد پر حساب کتاب کی بنیاد پر سماجی انصاف کے ساتھ معاشی انصاف فراہم کرنے کے لیے سنجیدہ اقدامات کر رہی ہے۔ غربت اور بے روزگاری سے لڑنا ہمارا بنیادی مقصد ہے۔
    انہوں نے کہا کہ حساب کتاب سے یہ حقیقت سامنے آئی کہ غربت تمام ذاتوں میں پائی جاتی ہے۔ روزگار فراہم کرنے کے علاوہ حکومت غربت کے خاتمے کے لیے فلاحی اسکیمیں چلا رہی ہے۔ اس کے لیے وہ ریاست کو خصوصی درجہ دینے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کسی کے ساتھ امتیازی سلوک نہیں کر رہی۔ غریبوں کو قومی دھارے میں لانے کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔
    تیجاشوی نے کہا کہ اگر خصوصی درجہ کی فراہمی کو ختم کر دیا گیا ہے تو پھر وزیر اعظم نریندر مودی نے 2015 کے اسمبلی انتخابات میں بہار کو خصوصی درجہ یا خصوصی پیکیج دینے کا وعدہ کیوں کیا تھا۔ 94 لاکھ غریبوں کو 2 لاکھ روپے دینے کی اسکیم پر 2.5 لاکھ کروڑ روپے خرچ کیے جائیں گے۔ غریبوں کو مکانات کے لیے ایک لاکھ 20 ہزار روپے فی خاندان دینے کا انتظام کیا گیا ہے، اس کا مطلب ہے کہ ہر ایک کے لیے اضافی رقم کی ضرورت ہے۔ تیجسوی نے کہا کہ مرکزی حکومت بھلے ہی خصوصی درجہ نہ دے لیکن کم از کم خصوصی درجہ کے مطالبے پر اپنی رائے ضرور دے۔
    نتیش مسلسل مطالبہ کر رہے ہیں:چودھری
    وزیر خزانہ و پارلیمانی امور وجے کمار چودھری نے کہا کہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار مسلسل خصوصی درجہ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ ذات پات کی بنیاد پر مردم شماری کے ذریعے پہلی بار ریاست کی پوری آبادی کی معاشی حالت کے بارے میں مستند معلومات حاصل کی گئی ہیں۔ اعداد و شمار کی صداقت کا ثبوت یہ ہے کہ غربت کی کل تعداد نیتی آیوگ کے جائزے کے قریب ہے۔ یہ تقریباً 34 فیصد ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر خصوصی درجہ دیا جاتا ہے تو ریاست کو 30-40 ہزار کروڑ روپے کے خرچ سے بچایا جائے گا، جو مرکزی حکومت کی مختلف اسکیموں پر خرچ ہو رہی ہے۔ حکومت اس رقم کو اپنی اسکیموں پر خرچ کرے گی۔ مرکزی حکومت بھی خصوصی مدد سے اس کی تلافی کر سکتی ہے۔ ہمارے پاس معاشی وسائل محدود ہیں۔ ان کے ذریعے غربت کا مکمل خاتمہ ممکن نہیں۔ وہ مرکز سے خصوصی امداد کی صورت میں خصوصی درجہ کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ اسکیمیں مرکز کی ہیں اور ریاست کو اپنے فنڈز کا 90 فیصد فراہم کرنا ہے۔
    ‘ہم اپنے وسائل سے ترقی کر رہے ہیں:
    توانائی اور منصوبہ بندی کی ترقی کے وزیر بیجندر پرساد یادو نے کہا کہ مرکز سے مناسب امداد نہ ملنے کے باوجود ریاست اپنے وسائل سے ترقی کر رہی ہے۔ اس کے باوجود ہم فی کس آمدنی کے لحاظ سے پیچھے ہیں۔ ریاست کا جغرافیائی رقبہ 2.8 فیصد ہے۔ ملک کی 8.8 فیصد آبادی اس میں رہتی ہے۔ آبادی کی کثافت زیادہ ہے۔ غربت بھی ہے۔ قدرتی آفات ہر سال تباہی پھیلاتی ہیں۔ انفراسٹرکچر تباہ۔ یہ سب بہار کو خصوصی ریاست کا درجہ دینے کے لیے موزوں بنیاد ہیں۔
    انہوں نے کہا کہ ان منفی حالات کے باوجود ریاست کی ترقی کی شرح مسلسل دوہرے ہندسے میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ آزادی کے بعد کرایہ برابری کی پالیسی کی وجہ سے ریاست میں صنعتوں کی ترقی نہیں ہوئی۔ اس سے کام کے مواقع کم ہو گئے۔ مزدوروں نے نقل مکانی کی۔
    وزراء کا استدلال: اسے نویں شیڈول میں شامل کرنا کیوں ضروری ہے؟
    ریاستی حکومت کے وزراء نے دلیل دی کہ بہار کے نئے ریزرویشن قانون کو آئین کے نویں شیڈول میں شامل کرنا کیوں ضروری ہے۔ جمعرات کو یہاں ایک پریس کانفرنس میں نائب وزیر اعلی تیجسوی یادو نے کہا کہ یہ ضروری ہے کہ کوئی بھی ریزرویشن کو لے کر عدالت میں نہ پھنسے۔ کئی دیگر ریاستوں نے بھی تحفظات پیش کئے۔

Related posts

ایشا امبانی نے چھاتی کے کینسر پر کتاب کا اجرا کیا

Siyasi Manzar

Assembly Election Results 2023 Live: تین ریاستوں میں بی جے پی کی شاندار کامیابی، تلنگانہ میں کانگریس

Siyasi Manzar

PM Modi interacted with Sultan Haitham bin Tariq of Oman:پی ایم مودی نے عمان کے سلطان ہیثم بن طارق سے بات چیت کی

Siyasi Manzar

Leave a Comment