Siyasi Manzar
راجدھانی

سنجوئے گھوش میڈیا ایوارڈ جیتنے والوں کو چرخہ کے 29 ویں یوم تاسیس پر اعزاز سے نوازا گیا

پونچھ کے محمد ریاض ملک چرخہ پریسیڈنٹ ایوارڈ سے سرفراز

نئی دہلی (پریس ریلیز) چرخہ ڈیولپمنٹ کمیونیکیشن نیٹ ورک، ایک سماجی تنظیم جو گاؤں کے سماجی مسائل کو تحریری طور پر میڈیا میں اہمیت دیتی ہے، نے جمعرات کو نئی دہلی کے انڈیا اسلامک کلچر سینٹر میں اپنا 29 واں یوم تاسیس منایا۔ اس موقع پر سنجوئے گھوش میڈیا ایوارڈ کے فاتحین کو بھی اعزاز سے نوازا گیا۔ آزاد فاؤنڈیشن کی بانی مینو وڈیرا اس پروگرام میں مہمان خصوصی کے طور پر موجود تھیں۔ پروگرام کا آغاز شمع روشن اورچرخہ کے بانی سنجوئے گھوش کو خراج عقیدت پیش کرنے سے ہوا۔ اس موقع پر چرخہ کی صدر اوشا رائے نے ملک کی مختلف ریاستوں میں تنظیم کے ذریعے چلائے جانے والے پروگراموں کا خاکہ پیش کیا۔ انہوں نے بتایا کہ کس طرح چرخہ ملک کے دور دراز دیہی علاقوں میں سماجی مسائل پر لکھنے میں دلچسپی رکھنے والے مصنفین کی شناخت کرکے نہ صرف ان کی تحریری صلاحیت کو نکھارتا ہے بلکہ انہیں مرکزی دھارے کے میڈیا سے جوڑنے کی کوشش بھی کرتا ہے۔اتراکھنڈ کے باگیشور ضلع کے گروڈ اور کپکوٹ بلاک کی نوجوان لڑکیوں کے ساتھ پروجیکٹ دیشا کا خصوصی ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس کی وجہ سے وہ نہ صرف کامیاب مصنفین بن رہی ہیں بلکہ خواتین کے حقوق سے آگاہ ہو کر پدرانہ سماج کو بھی چیلنج کر رہی ہیں۔

پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے مہمان خصوصی مینو وڈیرا نے سنجوئے گھوش کے شروع کردہ کام اور ان کے وژن کو دیہی سماج کی ترقی میں ایک اہم کوشش قرار دیا۔ انسٹی ٹیوٹ آف رورل مینجمنٹ، آنند (ایرما) کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے یاد کیا اور بتایا کہ اس انسٹی ٹیوٹ میں وہ سنجوئے کی جونیئر تھیں۔ انسٹی ٹیوٹ میں پڑھائی کے دوران بھی دیہی ہندوستان کے بارے میں سنجوئے کا نظریہ واضح تھا۔ وہ میڈیا میں دیہی ہندوستان کے لوگوں کی آواز کو بھی شہری علاقوں کے برابر جگہ دینا چاہتے تھے۔ چرخہ کا قیام ان کے اسی وژن کا حصہ تھا۔ آج چرخہ جس طرح ملک کے دور دراز علاقوں میں تحریر کے ذریعے سماجی شعور پھیلا رہا ہے اس کی مثالیں کم ہی دیکھنے کو ملتی ہیں۔ 2003 سے سنجوئے کے نام پر دیے جانے والے میڈیا ایوارڈ کی تعریف کرتے ہوئے مینو وڈیرا نے کہا کہ ایک طرف اس سے قلم کاروں کا جوش بڑھتا ہے تو دوسری طرف دیہی ہندوستان کی کئی کہانیاں مین اسٹریم میڈیا میں سامنے آتی ہیں۔

اتراکھنڈ کے باگیشور ضلع میں چرخہ کے ذریعہ چلائے جانے والے ‘پروجیکٹ دیشا’ کی ضلع کوآرڈینیٹر نیلم گرانڈی نے بھی اس موقع پر کلیدی مقرر کے طور پر خطاب کیا۔ گزشتہ 2 سالوں میں اس علاقے میں پروجیکٹ دیشا سے پہلے اور بعد کی صورتحال کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ کس طرح دور دراز کے دیہی علاقوں میں خواتین اور نوعمر لڑکیوں کو روایت اور ثقافت کے نام پر ذہنی اذیت سے گزرنا پڑتا تھا۔ ماہواری کے وقت جب اسے اپنے پیاروں کی صحبت کی سب سے زیادہ ضرورت ہوتی تھی، وہ گھر سے دور گائے کے گوشالہ میں رہنے پر مجبور تھی۔ خواتین اور نوعمر لڑکیاں اپنے حقوق سے آگاہ اور بااختیار نہیں تھیں۔ لیکن پچھلے دو سالوں میں چرخہ کی وجہ سے ان علاقوں میں کافی تبدیلی آئی ہے۔ نوعمر لڑکیاں نہ صرف اپنے حقوق سے آگاہ ہوئی ہیں بلکہ مضامین کے ذریعے صنفی امتیاز کے خلاف لکھنا بھی شروع کر دی ہیں۔ جسے چرخہ فیچر کے ذریعے ملک کی تین بڑی زبانوں ہندی، اردو اور انگریزی کے اخبارات اور ویب سائٹس پر بھی شائع کیا جا رہا ہے۔ اس کا اثر زمینی سطح پر پہلے ہی نظر آ رہا ہے۔ اب نوعمر لڑکیوں کی آواز کو نہ صرف سماجی بلکہ انتظامی سطح پر بھی اہمیت دی جارہی ہے۔ ایسی کئی کہانیاں ہیں جن کے اثرات زمینی سطح پر نظر آنے لگے ہیں۔ پروجیکٹ دیشا میں شامل ہونے کے بعد، لڑکیوں نے نہ صرف گھر کے اندر بلکہ سماجی طور پر بھی تنگ نظری کے خلاف لوگوں کی سوچ بدلنے میں کامیابی حاصل کی ہے۔

اس موقع پر دو زمروں میں کل 6 شرکاء کو ان کی تحریروں کی بنیاد پر چرخہ صدر اوشا رائے، مہمان خصوصی مینو وڈیرا اور نیلم گرانڈی کے ذریعہ سال 2023 کے سنجوئے گھوش میڈیا ایوارڈ سے نوازا گیا۔ زمرہ 1 میں دو آزاد صحافیوں اڈیشہ کی ایشوریہ موہنتی اور اتر پردیش کی جگیاشا مشرا کو نوازا گیا،زمرہ2 میں تحریر کی بنیاد پر منتخب نوجوان نوعمر لڑکیوں میں مرکز کے زیر انتظام علاقے جموں و کشمیر کے پونچھ سے تعلق رکھنے والی سیدہ طیبہ کاظمی، لداخ سے کمرون نیسا، اتراکھنڈ کے باگیشور ضلع کے گروڈ بلاک کے لمبا گڈ سے مہیما جوشی اور قومی دارالحکومت دہلی سے نوجوان مصنف جیوتی کو دیا گیا۔ تمام زمروں میں جیتنے والوں کو دیہی نوعمر لڑکیوں اور معاشرے میں خواتین کو درپیش چیلنجوں پر مضامین کے لیے انعامات سے نوازا گیا۔اس موقع پرجموں کے پونچھ میں واقع منڈی بلاک سے تعلق رکھنے والے چرخہ کے سینئر مصنف محمدریاض ملک، جو گزشتہ 11 سالوں سے چرخہ کے لیے مختلف سماجی مسائل پر مضامین لکھ رہے ہیں اور علاقے میں تبدیلی کے مترادف بن چکے ہیں،کو چرخہ پریسڈینٹ ایوارڈ سے نوازا گیا۔ پروگرام میں پروجیکٹ دیشا سے جری نوعمر لڑکیاں سیما مہتا، پوجا گوسوامی، مہیما جوشی، کویتا راول، تنوجا بھنڈاری اور دیکشا سے نے ڈسٹرکٹ کوآرڈینیٹر نیلم گرانڈی کی رہنمائی میں اور کملا کورنگا کی ہدایت میں سماجی بیداری پر مبنی ایک کٹھ پتلی ڈرامے پیش کرکے سب کو مسحور کردیا۔ پروگرام کے آخر میں چرخہ کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر چیتنا ورما نے ان تمام لوگوں کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے چرخہ کی ترقی میں اپنا حصہ ڈالا ہے اور مسلسل تعاون کر رہے ہیں۔اس موقع پر چرخہ کے پونچھ سے سید انیس الحق، سید بشارت حسین،یوسف جمیل، بابرنفیس، رخسار کوثر، ریحانہ کوثر اور رخسار کازمی سمیت بہار اور اتراکھنڈسے بھی چرخہ کے تمام مصنفین نے شرکت کی۔ پروگرام کی نظامت چرخہ کے کنسلٹنٹ ایڈیٹر شمس تمنا اور ایوشیہ سنگھ نے کیا۔

Related posts

عدالت نے اروند کیجریوال کوچھ دنوں کے ریمانڈ پرای ڈی کی حراست میں بھیجا

Siyasi Manzar

بی ایس پی کے ممبرپارلیمنٹ رتیش پانڈے بی جے پی میں شامل

Siyasi Manzar

ساتواں جشن اڈما-2024 علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں‌تزک و احتشام کے ساتھ منایا جائے گا: حامد احمد

Siyasi Manzar

Leave a Comment