Siyasi Manzar
راجدھانی

National Herald Case: ینگ انڈیا کے 751.9 کروڑ روپے کے اثاثے ضبط: نیشنل ہیرالڈ کیس میں ای ڈی کی کارروائی؛ اس کمپنی میں سونیا-راہل کی 76 فیصد حصہ داری ہے

نئی دہلی،21 نومبر(ایس ایم نیوز)انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) نے نیشنل ہیرالڈ کیس میں ینگ انڈیا کے 751.9 کروڑ روپے کے اثاثوں کو ضبط کیا ہے۔ منی لانڈرنگ کے معاملے میں کانگریس سے وابستہ ینگ انڈیا کے خلاف یہ کارروائی کی گئی ہے۔ اس کمپنی میں سونیا-راہل کی 76 فیصد حصہ داری ہے۔
اس معاملے میں، ای ڈی نے 3 اگست 2022 کو ہیرالڈ بلڈنگ، دہلی میں واقع ینگ انڈیا کمپنی کے دفتر کو سیل کر دیا تھا۔ پچھلے سال 2 اور 3 اگست کو ای ڈی کی ٹیم نے نیشنل ہیرالڈ کے 16 مقامات بشمول دہلی، ممبئی اور کولکاتہ میں صبح سے دیر شام تک چھاپے مارے تھے۔ یہ کارروائی سونیا اور راہول سے پوچھ گچھ کے بعد کی گئی۔
ای ڈی نے کہا- تحقیقات میں غیر قانونی جائیداد ملی:
تحقیقاتی ایجنسی نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ اس نے سونیا گاندھی، ان کے بیٹے راہول گاندھی اور صدر ملکارجن کھرگے سے پوچھ گچھ کی ہے اور ان کے بیانات ریکارڈ کیے ہیں۔ اس بنیاد پر کارروائی کی گئی۔ ای ڈی نے مزید کہا کہ تحقیقات سے پتہ چلا ہے کہ ینگ انڈیا کے پاس دہلی، ممبئی اور لکھنؤ میں ایسوسی ایٹڈ جرنلز لمیٹڈ (اے جے ایل) کی 661.69 کروڑ روپے کی غیر قانونی جائیدادیں ہیں۔ اس کے علاوہ اے جے ایل نے اس میں 90.21 کروڑ روپے کی غیر قانونی آمدنی کی سرمایہ کاری کی ہے۔ یہ پراپرٹی منسلک کردی گئی ہے۔

نیشنل ہیرالڈ کیس کیا ہے؟
نیشنل ہیرالڈ کیس پہلی بار بی جے پی لیڈر سبرامنیم سوامی نے 2012 میں اٹھایا تھا۔ اگست 2014 میں ای ڈی نے اس معاملے کا از خود نوٹس لیا اور منی لانڈرنگ کا مقدمہ درج کیا۔ کیس میں سونیا گاندھی، راہول گاندھی اور کانگریس کے موتی لال وورا، آسکر فرنانڈیز، سیم پتروڈا اور سمن دوبے کو ملزم بنایا گیا تھا۔
سونیا اور راہول پر یہ الزامات:
بی جے پی لیڈر سبرامنیم سوامی نے الزام لگایا کہ کانگریس نے نیشنل ہیرالڈ چلانے والی اے جے ایل سے 90 کروڑ روپے کے قرض کی وصولی کا حق ینگ انڈین لمیٹڈ (وائی آئی ایل) کو منتقل کیا اور ینگ انڈین لمیٹڈ نے اے جے ایل کے 2000 کروڑ روپے کے اثاثے کانگریس پارٹی کو منتقل کر دیے۔ صرف 50 لاکھ روپے ادا کر رہے ہیں۔
سوامی نے الزام لگایا کہ راہل-سونیا کی ینگ انڈین لمیٹڈ نے نیشنل ہیرالڈ چلانے والی اے جے ایل کمپنی پر کانگریس کے واجب الادا 90 کروڑ روپے کے قرض کی ادائیگی کے لیے 50 لاکھ روپے ادا کیے، جس کے بعد کانگریس نے اے جے ایل سے باقی 89.50 کروڑ روپے ادا کیے، قرض معاف کر دیا گیا۔
سوامی نے الزام لگایا کہ YIL کو اپنے قرض کی وصولی کے لیے نیشنل ہیرالڈ کی جائیدادوں کو حاصل کرنے کا حق حاصل ہوا، بشمول دہلی میں ایک اہم مقام پر واقع اس کی عمارت، جس کی مالیت تقریباً 2,000 کروڑ روپے ہے۔الزام ہے کہ 2010 میں 5 لاکھ روپے کے ساتھ بننے والی ینگ انڈین لمیٹڈ کے اثاثے چند سالوں میں بڑھ کر 800 کروڑ روپے ہو گئے۔
دوسری جانب محکمہ انکم ٹیکس کا کہنا ہے کہ راہول گاندھی نے ینگ انڈین لمیٹڈ کے شیئرز سے 154 کروڑ روپے کمائے۔ محکمہ انکم ٹیکس نے پہلے ہی ینگ انڈین لمیٹڈ کو 2011-12 کے لیے 249.15 کروڑ روپے کا ٹیکس ادا کرنے کا نوٹس جاری کیا ہے۔
نیشنل ہیرالڈ کی مالک کمپنی اے جے ایل سے 90 کروڑ روپے کا قرض ینگ انڈین لمیٹڈ کو منتقل کیا گیا، جس میں سونیا-راہل کا 76 فیصد حصہ ہے۔
اس معاملے میں سونیا سے 100 سے زیادہ سوالات پوچھے گئے تھے۔
جون 2022 میں نیشنل ہیرالڈ کیس میں راہول گاندھی سے 5 دنوں میں 50 گھنٹے پوچھ گچھ کی گئی۔ پھر 21 جولائی 2022 کو نیشنل ہیرالڈ کیس میں سونیا گاندھی سے 3 دن میں 12 گھنٹے تک پوچھ گچھ کی گئی۔ اس دوران ان سے 100 سے زائد سوالات کیے گئے۔ ای ڈی نے بھی راہل گاندھی سے جون میں پانچ دنوں میں 50 گھنٹے سے زیادہ پوچھ گچھ کی تھی۔
ای ڈی نے یہ سوالات سونیا سے پوچھے تھے۔
ینگ انڈیا لمیٹڈ تنظیم کس شعبے میں کام کرتی ہے؟
آپ کی رہائش گاہ 10 جن پتھ پر لین دین سے متعلق کتنی میٹنگیں ہوئیں؟
آپ لین دین کے بارے میں کیا معلومات جانتے ہیں؟ اس کے حصص کیسے فروخت ہوئے؟
جولائی میں کانگریس لیڈر راہل گاندھی نے سونیا گاندھی سے ای ڈی کی پوچھ گچھ کے خلاف احتجاج کیا تھا۔
جولائی میں کانگریس لیڈر راہل گاندھی نے سونیا گاندھی سے ای ڈی کی پوچھ گچھ کے خلاف احتجاج کیا تھا۔
2010 میں سونیا-راہول کی انٹری
2010 میں، ینگ انڈین پرائیویٹ لمیٹڈ (YIL) کے نام سے ایک نئی تنظیم بنائی گئی، جس نے AJL کو سنبھال لیا، جو نیشنل ہیرالڈ چلاتی تھی۔ YIL کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں سونیا گاندھی اور راہول گاندھی شامل تھے۔ YIL میں سونیا اور راہول کا حصہ 76% تھا اور باقی 24% موتی لال وورا اور آسکر فرنانڈیز کے پاس تھا۔ موتی لال وورا کا انتقال 2020 میں اور آسکر فرنانڈیز کا 2021 میں ہوا۔ اس کے بعد کانگریس نے AJL کا 90 کروڑ روپے کا قرض YIL کو منتقل کر دیا۔
کانگریس کے قرض کی ادائیگی کے بدلے اے جے ایل نے ینگ انڈین کو 9 کروڑ شیئرز دیئے۔ ان 9 کروڑ حصص کے ساتھ، ینگ انڈین نے AJL کے 99% حصہ حاصل کر لیے۔ اس کے بعد کانگریس نے اے جے ایل کا 90 کروڑ روپے کا قرض معاف کر دیا۔ سبرامنیم سوامی نے اس سودے پر سوال اٹھاتے ہوئے مقدمہ درج کیا تھا۔

الزامات پر کانگریس کے دلائل
کانگریس کا کہنا ہے کہ YIL کو منافع کمانے کے بجائے خیراتی مقاصد کے لیے بنایا گیا تھا۔ کانگریس کا یہ بھی کہنا ہے کہ ینگ انڈین لمیٹڈ نے جو لین دین کیا وہ مالی نہیں بلکہ تجارتی تھا۔ کانگریس کے ابھیشیک منو سنگھوی کا کہنا ہے کہ جب جائیداد یا نقدی کی منتقلی ہی نہیں ہے تو یہ منی لانڈرنگ کا معاملہ کیسے ہوسکتا ہے۔
سنگھوی کا کہنا ہے کہ جب اے جے ایل خسارے میں پڑی تو کانگریس نے اسے بچانے کے لیے 90 کروڑ روپے کی مالی مدد دی۔ اس کی وجہ سے اے جے ایل کو قرض ملا۔ اس نے اس قرض کو ایکویٹی میں تبدیل کیا اور 90 کروڑ روپے کا قرض نئی کمپنی ینگ انڈین کو منتقل کر دیا گیا، لیکن ینگ انڈین ایک غیر منافع بخش کمپنی ہے اور اس کے شیئر ہولڈرز اور ڈائریکٹرز کو کوئی ڈیویڈنڈ ادا نہیں کیا جا سکتا۔ سنگھوی کا دعویٰ ہے کہ اس کا مطلب ہے کہ آپ اس کمپنی سے ایک روپیہ بھی نہیں لے سکتے۔
سنگھوی کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ اے جے ایل کے پاس اب بھی نیشنل ہیرالڈ کی تمام جائیدادوں اور پرنٹنگ اور پبلشر کے کاروبار پر پہلے کی طرح حقوق ہیں۔ تبدیلی صرف یہ ہے کہ اے جے ایل کے حصص ینگ انڈین کے پاس ہیں، لیکن ینگ انڈین اس رقم کو کسی بھی طرح استعمال نہیں کر سکتے۔ یہ نہ تو منافع ادا کر سکتا ہے اور نہ ہی منافع کما سکتا ہے۔
نہرو نے نیشنل ہیرالڈ اخبار شروع کیا۔
نیشنل ہیرالڈ اخبار 1938 میں جواہر لعل نہرو نے 5 ہزار آزادی پسندوں کے ساتھ شروع کیا تھا۔ یہ اخبار ایسوسی ایٹڈ جرنل لمیٹڈ (AJL) نے شائع کیا تھا۔ آزادی کے بعد یہ اخبار کانگریس کا ماؤتھ پیس بن گیا۔
اے جے ایل نے یہ اخبار تین زبانوں میں شائع کیا۔ انگریزی میں ‘نیشنل ہیرالڈ کے علاوہ ہندی میں ‘نوجیون اور اردو میں ‘قومی آواز۔ آہستہ آہستہ اخبار خسارے میں چلا گیا اور کانگریس سے 90 کروڑ روپے کے قرض کے باوجود 2008 میں بند ہو گیا۔

Related posts

نئے ووٹرز کے اندراج کے لیے خصوصی کیمپ کا انعقاد

Siyasi Manzar

انڈین ریلوے لوگوں کو روزگار دینے کا کام کر رہی ہے

Siyasi Manzar

دلت کے بیٹے کو دہلی کا میئر بننے سے روکنے کے لیے لیفٹیننٹ گورنر نے میئر کے انتخابات منسوخ کیے: عام آدمی پارٹی

Siyasi Manzar

Leave a Comment