Siyasi Manzar
راجدھانی

عدالت نے اروند کیجریوال کوچھ دنوں کے ریمانڈ پرای ڈی کی حراست میں بھیجا

ای ڈی نے دعویٰ کیا کہ کیجریوال آبکاری پالیسی گھوٹالہ کے سرغنہ ہیںای ڈی نے عدالت میں کہا کہ اس پورے گھوٹالے کا پیسہ گوا انتخاب میں استعمال کیا گیا ہے۔اس پورے معاملے میں گرفتار منیش سسودیا کو ابھی تک ضمانت نہیں مل پائی ہے۔ ای ڈی نے عدالت سے کہا کہ شراب پالیسی بنانے میں کجریوال کا بڑا رول ہے ۔

نئی دہلی،22مارچ (ایس ایم نیوز)دہلی کی راؤز ایونیو کورٹ نے جمعہ کے روز آبکاری پالیسی گھوٹالے سے متلق منی لانڈرنگ کیس میں گرفتار وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کو 28 مارچ تک ای ڈی کی حراست میں بھیج دیا۔ ای ڈی نے جمعرات کی شام کیجریوال کی سرکاری رہائش پر تقریباً دو گھنٹے کی پوچھ تاچھ کے بعد انھیں گرفتار کیا تھا۔ ایجنسی نے انھیں دہلی حکومت کے دیگر وزرا، عآپ لیڈران اور دیگر کی ملی بھگت میں مبینہ ایکسائز ڈیوٹی گھوٹالے کا سرغنہ اور اہم سازشی بتاتے ہوئے 10 دن کی حراست کا مطالبہ کیا تھا۔اروند کیجریوال کو رات بھر اے پی جے عبدالکلام روڈ واقع ای ڈی دفتر میں رکھنے کے بعد جمعہ کی صبح راؤز ایونیو کورٹ کی اسپیشل جج کاویری باویجہ کے سامنے پیش کیا گیا۔ ای ڈی نے دعویٰ کیا کہ کیجریوال کچھ اشخاص کو فائدہ پہنچانے کے لیے آبکاری پالیسی 22-2021 تیار کرنے کی سازش رچنے اور مذکورہ پالیسی میں دیے گئے فائدہ کے بدلے میں شراب کاروباریوں سے رشوت مانگنے میں بھی شامل تھے۔
ایجنسی نے یہ بھی الزام لگایا کہ کیجریوال ’عآپ‘ کے گوا انتخابی مہم میں جرم سے ہوئی آمدنی کے استعمال میں شامل تھے، جس کے وہ کنوینر اور آخری فیصلہ لینے والے شخص ہیں۔ ای ڈی نے عدالت کو بتایا کہ ’آبکاری پالیسی 22-2021‘ کا مسودہ ’جنوب کے گروپ‘ کو دیے جانے والے فائدہ کو توجہ میں رکھ کر تیار کیا جا رہا تھا اور اس کا شریک ملزم وجئے نایر، سابق نائب وزیر اعلیٰ منیش سسودیا اور ’جنوب کے گروپ‘ کے اراکین-نمائندوں کی ملی بھگت سے کیا گیا تھا۔کیجریوال نے مبینہ طور پر پالیسی سازی اور عمل درآمد میں فائدہ دینے کے بدلے میں جنوب کے گروپ سے رشوت کا مطالبہ کیا تھا۔ کیجریوال اور عآپ کی طرف سے نایر کو جنوب کے گروپ سے 100 کروڑ روپے کی رشوت ملی، جس کے اہم شخص مگنٹا شرینواسولو ریڈی، راگھو مگنٹا، سرتھ ریڈی اور بی آر ایس لیڈر کے. کویتا ہیں۔ اب تک کی گئی جانچ کے مطابق ای ڈی نے ریمانڈ سے متعلق درخواست میں عآپ کو جرم کی آمدنی کا اہم استفادہ کنندہ بتایا اور دعویٰ کیا کہ جرم کے تقریباً 45 کروڑ روپے کی آمدنی کا استعمال، جو جنوب کے گروپ سے ملی رشوت کا حصہ تھی، 22-2021 میں گوا میں عآپ کی انتخابی مہم میں کیا گیا تھا۔
مرکزی ایجنسی نے کہا کہ منی لانڈرنگ کی جانچ کرنے پر یہ پتہ چلا کہ جو پیسہ گوا میں منتقل کیا گیا تھا، وہ چار راستوں سے آیا تھا۔ اس میں کہا گیا ہے کہ گوا میں عآپ کے ذریعہ انتخابی تشہیر سے متعلق سرگرمیوں میں شامل مختلف اشخاص کے بیانات سے پتہ چلا ہے کہ سروے کارکنان، علاقائی منتظمین، اسمبلی منیجرس وغیرہ کی شکل میں کیے گئے ان کے کام کے لیے انھیں نقد ادائیگی کی گئی تھی۔

Related posts

تیمار پور کے ایم ایل اے دلیپ پانڈے نے تیمار پور اسمبلی کے وزیرآباد گاؤں میں چھٹھ پوجا کے لیے تیار کیے جا رہے چھٹھ گھاٹ کا معائنہ کیا

Siyasi Manzar

وزارت حج و عمرہ نے عمرہ و وزٹیشن فورم کے پہلے ایڈیشن کے آغاز کی تیاریاں مکمل کرلیں

Siyasi Manzar

بی جے پی اجتماعی انصاف کے ساتھ سب کا وکاس پر یقین رکھتی ہے: جمال صدیقی

Siyasi Manzar

Leave a Comment