Siyasi Manzar
قومی خبریں

باپ کے موبائل چھیننے پر 16 سالہ لڑکے نے خودکشی کر لی، بچوں کو اس طرح کےنشے سے بچائیں۔

ممبئی17،نومبرممبئی میں خودکشی کا دل دہلا دینے والا واقعہ سامنے آیا ہے۔ یہاں ایک باپ نے اپنے 16 سالہ بیٹے سے موبائل فون چھین لیا۔ اس سے ناراض ہو کر بچے نے اپنی ماں کے دوپٹہ کو پھانسی کے طور پر استعمال کر کے خودکشی کر لی۔ یہ واقعہ ہر والدین کے لیے تکلیف دہ ہے۔ اس طرح بچوں کو اس کی لت سے بچایا جا سکتا ہے۔
موبائل فون اور انٹرنیٹ نے لوگوں کی زندگیاں آسان کر دی ہیں۔ اس کے ذریعے لوگ ہر وقت ایک دوسرے سے رابطے میں رہ سکتے ہیں۔ موبائل فون سے کئی طرح کے کام کیے جا سکتے ہیں۔ لوگ اپنے فارغ وقت میں کسی سے بات کرنے سے لے کر گیم کھیلنے تک سب کچھ کرتے ہیں۔ بچوں سے لے کر بوڑھوں تک کو موبائل پر جمی آنکھوں سے دیکھا جا سکتا ہے۔ لیکن موبائل فون بچوں کا دشمن بن گیا ہے۔ اس سے نہ صرف ان کا قیمتی وقت ضائع ہو رہا ہے بلکہ کئی بیماریاں بھی جنم لے رہی ہیں۔ اگر والدین ان سے بچانے کے لیے کچھ کوششیں کریں تو بچے خطرناک قدم اٹھانے سے باز نہیں آتے۔ ایسا ہی ایک افسوسناک معاملہ ممبئی میں دیکھنے میں آیا ہے۔
معلومات کے مطابق ممبئی کے مالوانی میں ایک خاندان رہتا ہے۔ ایک 16 سالہ لڑکا اکثر اپنے موبائل فون پر گیم کھیلتا تھا۔ یہ دیکھ کر اس کے والدین کو بہت دکھ ہوا۔ کیونکہ اس کی وجہ سے ان کی پڑھائی متاثر ہو رہی تھی۔ یہ 16 نومبر کی رات تھی۔ ہمیشہ کی طرح بچہ موبائل پر نظریں جمائے بیٹھا تھا۔ جب اس کے والد نے اسے اپنا موبائل رکھنے کو کہا تو اس نے اسے نظر انداز کردیا۔ اس کے بعد ناراض والد نے اس سے فون چھین لیا۔ لڑکا اپنے باپ سے لڑنے لگا۔ دونوں کے درمیان گرما گرم بحث ہوئی۔ اس دوران اس نے اپنے والد کو دھمکی دی کہ وہ خودکشی کر لے گا۔ باپ کا خیال تھا کہ اس نے غصے میں کہا ہوگا اس لیے اس نے اس کی دھمکی کو سنجیدگی سے نہیں لیا۔ 17 نومبر کی رات لڑکے نے اپنی ماں کا اسکارف لے لیا۔ وہ کچن میں لٹکے کانٹے سے لٹک گیا۔ کچھ دیر بعد ماں کچن میں گئی تو بچے کو دیکھا۔
اسے لٹکتا دیکھ کر وہ چیخ پڑی۔ اسے جلدی سے نیچے لایا گیا اور ہسپتال لے جایا گیا لیکن تب تک وہ دم توڑ چکا تھا۔ ہسپتال نے پولیس کو اطلاع دی۔ اس کے بعد لڑکے کی لاش کا پوسٹ مارٹم کیا گیا۔ یہ واقعہ سن کر ہر کوئی دنگ رہ جاتا ہے۔ آئے روز موبائل فون کی وجہ سے بچوں کے جان قربان کرنے کی خبریں آتی رہتی ہیں۔ موبائل فون لینے سے ناراض کچھ بچے نے ٹرین کے سامنے چھت سے چھلانگ لگا کر خودکشی کر لی۔ ایسا کرنے والے زیادہ تر لوگ نوعمر ہیں۔

بچوں کو موبائل فون کی لت سے کیسے بچایا جائے۔

اکثر کام کرنے والے لوگ اپنے بچوں کو مصروف رکھنے کے لیے بچپن سے ہی موبائل فون دیتے ہیں۔ یہ بچے بڑے ہو کر اس کی لت کا شکار ہو جاتے ہیں۔ جب ان کی صحت اور پڑھائی متاثر ہونے لگتی ہے تو والدین کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ اس وقت بچے اگر اچانک موبائل فون اٹھا لیں تو وہ جارحانہ ہو جاتے ہیں۔ اس کے بعد کئی بچے خطرناک قدم اٹھاتے ہیں۔ ایسی صورتحال سے بچنے کےلیے ضروری ہے کہ والدین بچپن سے ہی توجہ دیں۔ اگر کوئی بچہ نشے کا شکار ہو جائے تو اس کے ساتھ بڑی محبت سے پیش آنا پڑتا ہے۔ اس کے لیے مسلسل رہنمائی،طبی مشاورت اور علاج کی ضرورت ہے۔ آئیے موبائل فون کی لت سے چھٹکارا پانے کی تدابیر کے بارے میں جانتے ہیں۔

-سب سے پہلے والدین اپنے بچوں کے لیے موبائل فون کا وقت مقرر کریں۔ انہیں سمجھائیں اور انہیں صرف ایک مخصوص مدت کے لیے فون استعمال کرنے کی اجازت دیں۔ ہو سکے تو اس وقت کا ذکر ان کے ٹائم ٹیبل میں کریں۔ زیادہ سے زیادہ موبائل مفت سرگرمیوں کی حوصلہ افزائی کریں۔

بچوں میں تبدیلی کے لیے خود کو بدلنا بہت ضروری ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ بچوں کے موبائل کی لت سے چھٹکارا پانے کے لیے سب سے پہلے ان کے استعمال کی حد مقرر کرنا ہوگی۔ اس کے ساتھ جہاں تک ممکن ہو بچوں کے ساتھ بات چیت کرنی چاہیے۔

-بچوں کی جسمانی اور بیرونی سرگرمیوں کے لیے حوصلہ افزائی کی جانی چاہیے۔ والدین کھیلوں، مشاغل یا کمیونٹی کی سرگرمیوں میں شرکت کی حوصلہ افزائی کر سکتے ہیں۔ ایسا کرنے سے بچوں کو ڈیوائس سے دور رکھا جا سکتا ہے۔ ایک بار جب وہ لطف اندوز ہونا شروع کر دیں گے تو وہ خود بخود ان سرگرمیوں کی طرف راغب ہو جائیں گے۔

والدین اپنے نوعمروں کو جسمانی اور دماغی صحت پر زیادہ اسکرین ٹائم کے ممکنہ منفی اثرات کے بارے میں تعلیم دے سکتے ہیں۔ نیند کی کمی، آنکھوں میں تناؤ اور باہمی تعلقات پر اثرات جیسے موضوعات پر بات کی جا سکتی ہے۔

– والدین ایپ کے استعمال اور اسکرین کے وقت کی نگرانی کے لیے اسمارٹ فونز پر والدین کے کنٹرول کی خصوصیات استعمال کرسکتے ہیں۔ ایسا کرنے سے بچوں کو موبائل فون کا استعمال محدود کرنے کی ترغیب دی جا سکتی ہے۔ ورنہ کئی بار بچے چھپ چھپ کر فون استعمال کرنے لگتے ہیں۔

– نوعمر بچوں کے ساتھ نارمل سلوک کیا جانا چاہیے۔ ان کے ساتھ مسلسل گفتگو ہونی چاہیے۔ ان کے ذہن میں کیا ہے اسے سمجھنے کی کوشش کرنی چاہیے۔ اس کے ساتھ انہیں موبائل کے مضر اثرات کے بارے میں مسلسل بتایا جائے۔ دھمکی دے کر موبائل فون کا استعمال بند نہیں کیا جا سکتا۔

Related posts

Assembly Election Results 2023 Live: تین ریاستوں میں بی جے پی کی شاندار کامیابی، تلنگانہ میں کانگریس

Siyasi Manzar

متحدہ عرب امارات اور ہندوستان سرسبز اور خوشحال مستقبل کی تشکیل میں شراکت دار:مودی

Siyasi Manzar

اللہ کے حکم اور نبی کریم ﷺ کے بتائے ہوئے راستے پر چل کر ہی کامیابی ملے گی: ڈاکٹر ایوب

Siyasi Manzar

Leave a Comment