Siyasi Manzar
قومی خبریں

چیف جسٹس کھلےعام اپنےعقیدےکااظہارکرکےغلط روایت قائم کررہےہیں:شاہنوازعالم

اقلیتی کانگریس نے چیف جسٹس کو خط بھیجا ،سی جے آئی کی جانب سے گاندھی جی کو غلط سیاق و سباق میں پیش کرنے پر اختلاف کا اظہار کیا
لکھنؤ، 12 جنوری 2023، اقلیتی کانگریس نے چیف جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ کے حال ہی میں عوامی سطح پر اپنے عقیدے کے اظہار کے بارے میں مختلف اضلاع سے چیف جسٹس کو کتابچے بھیج کر اور ایک نئی روایت قائم کرنے اور گاندھی جی کا غلط سیاق و سباق میں حوالہ دیتے ہوئے اپنے اختلاف کا اظہار کیا ہے۔
کانگریس ہیڈکوارٹر سے جاری پریس ریلیز میں اقلیتی کانگریس کے ریاستی صدر شاہنوازعالم نے کہا ہے کہ ڈی وائی چندر چوڑ سے پہلے کسی بھی چیف جسٹس نےعوامی طور پر اپنے اعقیدے کا مظاہرہ نہیں کیا تھا۔ یہاں تک کہ اگر وہ اپنے عقیدے کی بنیاد پر مندر، مسجد، گرودوارہ یا گرجا گھربھی گئے تو اس عمل ذاتی سطح کا قراردیا۔ انہوں نے اسےعوامی فوٹو شوٹ یا بیان بازی کا موقع نہیں بنایا۔ لیکن ایسا کر کے موجودہ چیف جسٹس نے ایک نئی روایت شروع کر دی ہے جو سرکاری طور پر سیکولر ریاست کی اقدار کے مطابق نہیں ہے۔
انہوں نے کہا کہ چیف جسٹس کا یہ بیان بھی اخبارات میں شائع ہوا ہے کہ وہ عدلیہ کو درپیش چیلنجوں کو سمجھنے اور ان کا حل تلاش کرنے کے لیے مہاتما گاندھی کی زندگی اور اقدار کے زیر اثر مختلف ریاستوں کا دورہ کر رہے ہیں۔ جو کہ تاریخی طور پرغلط ہے کیونکہ جنوبی افریقہ سے ہندوستان آنے کے بعد گاندھی جی نے پورے ملک کا دورہ کرکے سماج کو سمجھنے کی کوشش کی لیکن وہ مدورائی کے میناکشی مندر کے علاوہ کسی عبادت گاہ پر عوامی طور پر نہیں گئے اور وہ بھی 1946 میں جب مندرانتظامیہ نے دلتوں کو داخلے کی اجازت دے دی۔ انہوں نے کہا کہ میمورنڈم میں گاندھی جی سے متعلق غلط حقائق کو پیش کرنے پراعتراض اٹھایا گیا ہے۔
میمورنڈم میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ جب سینئر فقہا، سپریم کورٹ کے سابق ججزاور سینئر وکلاء سرعام ان کے ایک سالہ دور حکومت پر سوالات اٹھا رہے ہیں اور وہ ان کے سوالات کا جواب دینے سے صاف انکار کر رہے ہیں، ایسے وقت میں جب یہ عام تاثر بنتا جا رہا ہے کہ وہ زبانی مودی سرکار کے خلاف سختی مگر کوئی کارروائی نہیں کرتے، ان کی زیر قیادت کالجیم کے سامنے نفرت انگیز تقریر کرنے والی بی جے پی مہیلا مورچہ کی رہنما وکٹوریہ گوری کو چنئی ہائی کورٹ کا جج بنا دیا گیا، اگر جسٹس عقیل قریشی کو جج نہیں بنایا گیا۔ سپریم کورٹ میں جج اپنی سینیارٹی کے باوجود حکومتی دباؤ کے باعث پھر ان کا طرزعمل کئی سوالات کو جنم دیتا ہے۔
میمورنڈم میں مزید کہا گیا ہے کہ جب جموں و کشمیر کے چیف جسٹس پنکج متل جنہوں نے آئین کے دیباچے میں لفظ سیکولر کی موجودگی کو بدنما داغ قرار دیا تھا، کو ترقی دے کر سپریم کورٹ میں جج بنایا جاتا ہے یا جب یہ تاثر مضبوط ہوتا ہے کہ وہ ایک ایسا شخص ہے جوعبادت گاہوں میں لفظ ‘سیکولر’ کے استعمال کی مخالفت کرتا ہے، ایکٹ 1991 اسے کمزور کرنے کی طرف بڑھ رہا ہے، جب سپریم کورٹ، بنیادی ڈھانچے میں تبدیلی کے خلاف دیے گئے اپنے ہی سب سے بڑے آئینی بنچ کے فیصلے کے خلاف جا رہی ہے۔آئین کے دیباچے سے سوشلسٹ اور سیکولر کے الفاظ نکالنےکی درخواست سماعت کے لیے منظورکر لی گئی۔جب وزیراعظم کی اقتصادی مشاورتی کونسل کے چیئرمین عوامی سطح پر آئین کو تبدیل کرنے کی وکالت کرتے ہوئے بھی خاموش رہتے ہیں تو ان کے عقیدے کا عوامی مظاہرہ اورگاندھی جی کےغلط اقتباسات کا استعمال ان کے ارادوں پر شکوک پیدا کرتا ہے، ایسا ہونا فطری ہے۔

Related posts

حکومت سعودی عرب کا خوش آئند اقدام اورمبارک وقابل ستائش عمل:عبدالحکیم مدنی

Siyasi Manzar

Imran Pratapgarhi:تلنگانہ میں کانگریس بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کرے گی

Siyasi Manzar

ممبئی میں تین روزہ جشنِ اڈما۔ 2023 کا آج سے آغاز، آیوش ہیلتھ میلہ کا شایان شان افتتاح

Siyasi Manzar

Leave a Comment