Siyasi Manzar
قومی خبریں

وزیراعلیٰ نے ہمیر پور ضلع کے متاثرہ خاندانوں کو 14 کروڑ روپے جاری کئے

اگر پورا گھر خراب ہو جائے تو پہلی قسط کے طور پر 3-3 لاکھ روپے کی قسط جاری کی جاتی ہے،ہمیر پور میں بجلی بورڈ کے چیف انجینئر کا دفتر کھلے گا،شہر میں بجلی کی لائنوں کو زیر زمین کرنے کے لیے 20 کروڑ روپے کا اعلان کیا۔

ہمیر پور،ہماچل پردیش،26 نومبر(ایس ایم نیوز)وزیراعلیٰ ٹھاکر سکھویندر سنگھ سکھو نے آج بارش کے اس موسم میں شدید بارشوں، لینڈ سلائیڈنگ اور سیلاب سے ہونے والی آفت سے متاثر کنبوں کے لیے ‘بحالی پروگرام کے تحت ہمیر پور ضلع میںتباہی سےمتاثرہ خاندانوں کو 14 کروڑ روپے سے زیادہ کی امدادی رقم فراہم کی۔ جس میں 122 خاندانوں کے گھر مکمل طور پر تباہ ہونے کی صورت میں 3 لاکھ روپے پہلی قسط کے طور پر جاری کیے گئے۔ ایسے خاندانوں کو پہلی قسط کے طور پر کل 3.66 کروڑ روپے جاری کیے گئے۔
وزیر اعلیٰ نے ضلع کے دو بے گھر خاندانوں کو اراضی کے دستاویزات حوالے کیے اور 555 جزوی طور پر تباہ شدہ مکانات کی مرمت کے لیے ایک ایک لاکھ روپے کی مالی امداد فراہم کی۔ انہیں کل 5.55 کروڑ روپے جاری کیے گئے۔ اس کے علاوہ انہوں نے متاثرہ 8 دکانوں اور ڈھابہ مالکان کو ایک ایک لاکھ روپے کی معاوضے کی رقم بھی فراہم کی۔ انہوں نے 622 تباہ شدہ گائے کے شیڈوں کی مرمت کے لیے 3.11 کروڑ روپے کی مالی امداد اور آفت میں اپنا سامان کھونے والے 71 خاندانوں کو 50،000 روپے کی مالی امداد فراہم کی۔
اس کے علاوہ ضلع ہمیر پور میں تباہ ہونے والی 1103 کنال اراضی کے عوض 10 ہزار روپے فی بیگھہ کے حساب سے 55 لاکھ روپے اور 4 ہزار روپے فی بیگھہ کے حساب سے 35.20 لاکھ روپے کا معاوضہ دیا گیا۔ 1760 کنال اراضی پر کسانوں کی فصلوں کو پہنچنے والے نقصان کے ازالے کی رقم 50 لاکھ روپے فراہم کی گئی۔ وزیر اعلیٰ نے 27 جانوروں کی موت پر مویشی پالنے والوں کو 8 لاکھ روپے کی رقم جاری کی۔

ہمیرپور میں بجلی بورڈ کے چیف انجینئر کا دفتر کھولنے اور ہمیر پور شہر کی بجلی کی تاروں کو زیر زمین کرنے کے لیے 20 کروڑ روپے فراہم کرنے کا اعلان کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ شہر کی بجلی کی تاروں کو ایک سال میں زیر زمین کر دیا جائے گا۔ انہوں نے برسوں سے زیر التوا بس اسٹینڈ کی تعمیر کے لیے پہلی قسط کے طور پر 2 کروڑ روپے فراہم کرنے کا اعلان کیا۔ انہوں نے کہا کہ نیری میں 3 کروڑ کی لاگت سے ہار ٹی کلچر یونیورسٹی کا ہاسٹل تعمیر کیا جائے گا۔
انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت عام لوگوں اور غریبوں کی حکومت ہے اور ان کے دکھ درد کو بہتر جانتی ہے۔تباہی کے دوران، ریاستی حکومت نے 48 گھنٹوں کے اندر بجلی اور پانی جیسی ضروری خدمات کو بحال کیا اور 75 ہزار پھنسے ہوئے سیاحوں اور 15 ہزار گاڑیوں کو بچایا۔ انہوں نے کہا کہ ہماچل پردیش کی تاریخ میں پہلے کبھی اتنے بڑے پیمانے پر نقصان نہیں ہوا تھا لیکن بی جے پی لیڈر اسمبلی اجلاس کا مطالبہ کرتے رہے۔ جب اجلاس بلایا گیا تو تین دن کی بحث کے بعد بھی لوگوں کی حمایت میں لائی گئی تجویز کی حمایت نہیں کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے خصوصی پیکیج کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر داخلہ امت شاہ سے بھی ملاقات کی، لیکن آج تک مرکزی حکومت نے ایک پیسہ بھی مدد نہیں کی۔ یہی نہیں، قواعد کے مطابق 10,000 کروڑ روپے کے دعوے مرکز کو بھیجے گئے ہیں۔
وزیر اعلیٰ نے کہا کہ بی جے پی ممبران پارلیمنٹ نے ریلیف پیکیج کے لئے کوئی کوشش نہیں کی اور نہ ہی انہوں نے کسی مرکزی لیڈر سے کوئی مطالبہ کیا۔ 75 ہزار کروڑ روپے کا قرض اور 10 ہزار کروڑ روپے کے سرکاری ملازمین کی ذمہ داریوں کے باوجود ریاستی حکومت نے متاثرہ افراد کے لیے 4500 کروڑ روپے کا خصوصی امدادی پیکیج جاری کیا ہے۔ جس کے تحت مکمل طور پر تباہ شدہ مکان کے لیے دیا جانے والا معاوضہ 1.30 لاکھ روپے سے ساڑھے پانچ گنا بڑھا کر 7 لاکھ روپے کر دیا گیا۔ اس کے علاوہ کچے کے مکان کو جزوی نقصان کی صورت میں معاوضہ 4000 روپے سے 25 گنا بڑھا کر 1 لاکھ روپے اور پکے مکان کو جزوی نقصان پہنچنے کی صورت میں معاوضہ 15.5 گنا بڑھا 1 لاکھکر روپے کر دیا گیا ہے۔ اس کے ساتھ مفت بجلی اور پانی کے کنکشن اور 280 روپے فی بوری کے حساب سے سیمنٹ فراہم کیا جائے گا۔
ٹھاکر سکھوندر سنگھ سکھو نے کہا کہ دکانوں اور ڈھابوں کو پہنچنے والے نقصان کا معاوضہ 25 ہزار روپے سے چار گنا بڑھا کر ایک لاکھ روپے کر دیا گیا ہے۔ گائے کے شیڈ کو پہنچنے والے نقصان کی تلافی کی رقم 3 ہزار روپے سے بڑھا کر 50 ہزار روپے کر دی گئی ہے۔ ریاستی حکومت 2500 روپے کے معاوضے کی رقم میں 20 گنا اضافہ کرے گی اور کرایہ داروں کے سامان کے نقصان پر 50 ہزار روپے کی امدادی رقم فراہم کرے گی۔

وزیر اعلیٰ نے کہا کہ مرکزی حکومت نے پرانی پنشن کو لاگو کرنے کے لیے ہماچل پردیش پر کئی پابندیاں عائد کیں۔ انہوں نے کہا کہ ہماچل پردیش کی قرض کی حد 6600 کروڑ روپے ہے اور ریاستی حکومت نے اب تک 4100 کروڑ روپے کا قرض لیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سابق بی جے پی حکومت نے سیاسی فائدے کے لیے اپنے دور اقتدار کے آخری سال میں 1100 نئے تعلیمی ادارے کھولے۔ نئی حکومت کے قیام کے بعد رات کو افسران کے ساتھ میٹنگیں کی گئیں اور ریاست کو قرضوں کی دلدل سے نکالنے کی کوشش کی گئی، تاکہ ہماچل پردیش کو خود کفیل بنایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت چار سالوں میں ریاست کو خود کفیل اور 10 سالوں میں ملک کی سب سے خوشحال ریاست بنانے کی کوششیں کر رہی ہے۔
ٹھاکر سکھویندر سنگھ سکھو نے کہا کہ موجودہ ریاستی حکومت اپنے وسائل کو بڑھانے کے عزم کے ساتھ کام کر رہی ہے۔ اس سال ہماچل پردیش حکومت کی آمدنی میں 1100 کروڑ روپے کا اضافہ ہونے کا اندازہ ہے۔ ریاستی حکومت کو شراب کے ٹھیکوں کی نیلامی سے 500 کروڑ روپے کا اضافی ریونیو حاصل ہوگا۔
انہوں نے کہا کہ ہمیر پور میں جلد ہی ریاستی سلیکشن کمیشن کا آغاز کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت 6000 اساتذہ اور 2000 سے زیادہ وان متروں کے عہدوں کو پر کرنے جا رہی ہے۔ اس کے ساتھ ہی پولیس بھرتیوں میں خواتین کو 30 فیصد ریزرویشن دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت نے 30 اور 31 اکتوبر 2023 کو ریاست بھر میں ڈیتھ کورٹس کا انعقاد کیا جس کے نتائج بہتر رہے اور 41,907 زیر التوا موت کے مقدمات میں سے 31,105 کو نمٹا دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ یکم اور 2 دسمبر کو دوبارہ اس قسم کی خصوصی عدالت کا ریاست بھر میں انعقاد کیا جائے گا جسے ریونیو لوک عدالت کا نام دیا گیا ہے۔ اس خصوصی عدالت میں موت اور تقسیم کے زیر التوا مقدمات کو ترجیحی بنیادوں پر نمٹا دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت 20 جنوری تک محصولات سے متعلق زیر التوا مقدمات کو نمٹانے کی کوشش کر رہی ہے۔
ٹھاکر سکھوندر سنگھ سکھو نے کہا، "میڈیکل کالج کانگریس پارٹی کا تحفہ ہے جو میں لایا ہوں، جس میں ہم بہترین کینسر سینٹر قائم کرنے جا رہے ہیں۔ آہستہ آہستہ ہم ریاست کی اقتصادی بنیاد کو مضبوط کرتے ہوئے آگے بڑھ رہے ہیں۔ ریاستی حکومت نے اپنے حقوق واپس لینے کی جنگ شروع کر دی ہے۔ ہماچل کے لوگوں کو دھولہ سدھ، لوہری اور سنی پاور پراجیکٹس میں بھی حقوق دیے جائیں گے۔
انہوں نے کہا کہ پچھلی بی جے پی حکومت کے دور میں ہماچل پردیش اسٹاف سلیکشن کمیشن میں کاغذات بیچے گئے تھے، جس کے پیش نظر ریاستی حکومت نے اسے تحلیل کردیا۔ انہوں نے کہا کہ پچھلی حکومت کے دور میں پولیس بھرتی گھوٹالہ، 100 کروڑ روپے کا کان کنی گھوٹالہ اور 2500 کروڑ روپے کا کرپٹو کرنسی گھوٹالہ ہوا۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ریاست میں پوسٹ کوڈ 817 اور 939 کی بھرتی کا معاملہ گزشتہ کئی سالوں سے عدالت میں زیر التوا تھا، لیکن ریاستی حکومت کی کوششوں سے ان مقدمات کی سماعت میں تیزی آئی اور جلد ہی نتائج سامنے آئے۔ ان بھرتیوں کے امتحانات کا اعلان کیا جائے گا۔

ٹھاکر سکھویندر سنگھ سکھو نے ہمیر پور ضلع میں ایک بے زمین یتیم بچے کو 4 یتیم بچوں کو سرٹیفکیٹ اور زمین کے دستاویزات بھی حوالے کیے۔ انہوں نے کہا کہ ضلع کے 252 بچوں کو ریاست کے بچوں کے طور پر گود لیا گیا ہے، جن میں سے 105 بچے 18 سال تک کی عمر کے ہیں اور 147 بچے 18 سے 27 سال کی عمر کے ہیں۔

ٹھاکر سکھویندر سنگھ سکھو نے کہا کہ وزیر اعلیٰ بننے کے بعد وہ سکریٹریٹ آنے کے بجائے گرلز آشرم، توتی کنڈی گئے۔ ریاستی حکومت نے مکھی منتری سکھ-آشرے یوجنا شروع کیا، جس میں ان بچوں کی دیکھ بھال 27 سال تک ریاستی حکومت کی ذمہ داری ہوگی۔ یتیم بچوں کو اعلیٰ تعلیم اور خود انحصاری کے لیے مالی امداد فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ زمین اور مکانات کی تعمیر کے لیے مدد بھی فراہم کر رہے ہیں۔
چیف منسٹر نے سری نواس رامانوجن ڈیجیٹل اسٹوڈنٹ اسکیم کے تحت ہمیر پور ضلع کے 13 ہونہار طلباء کو ٹیبلٹ بھی فراہم کئے۔
ایم ایل اے اندر دت لکھن پال نے کہا کہ بی جے پی نے تباہی کے وقت محض سیاست کھیلی اور اسمبلی میں لائی گئی قرارداد کی حمایت نہیں کی۔ انہوں نے کہا کہ آفت سے متاثرہ افراد کے لیے ریاستی حکومت کا 4500 کروڑ روپے کا خصوصی امدادی پیکج پورے ملک کے لیے ایک مثال ہے، جب کہ مرکز سے کوئی مدد نہیں ملی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ نے آفت سے متاثرہ لوگوں کے دکھ درد میں شریک کیا اور پھنسے ہوئے سیاحوں کو بحفاظت نکالا۔ آفت کے دوران بہتر کام کے لیے ان کی کوششوں کو ریاست بھر میں سراہا گیا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت نے پرانی پنشن کو لاگو کرکے اپنی ضمانت پوری کردی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت نے 680 کروڑ روپے کی راجیو گاندھی سیلف ایمپلائمنٹ اسٹارٹ اپ اسکیم کا پہلا مرحلہ شروع کیا ہے، جس کے تحت ریاستی حکومت ای ٹیکسی کی خریداری پر 50 فیصد سبسڈی فراہم کر رہی ہے۔ انہوں نے وزیر اعلیٰ ٹھاکر سکھوندر سنگھ سکھو کی ہماچل پردیش کو قرض سے پاک کرنے کی کوششوں کی تعریف کی اور کہا کہ آنے والے وقت میں ریاست خوشحال ہو گی۔
ایم ایل اے سریش کمار نے کہا کہ آفت کے دوران ریاست میں جان و مال کا بہت زیادہ نقصان ہوا ہے، جس کی وجہ سے کئی خاندان بری طرح متاثر ہوئے ہیں۔ انہوں نے سانحہ کے دوران ہماچل پردیش کو قابل قیادت فراہم کرنے پر وزیر اعلیٰ کو مبارکباد دی اور کہا کہ وہ لوگوں کے درمیان گئے اور لوگوں کی مدد کی۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت ہماچل پردیش میں ہونے والی آفت کو قومی آفت قرار دینے کے لیے اسمبلی میں ایک تجویز لے کر آئی لیکن بی جے پی نے اس کی حمایت نہیں کی۔

ایم ایل اے آشیش شرما نے کہا کہ وزیر اعلیٰ ٹھاکر سکھویندر سنگھ سکھو ریاست کی خدمت میں دن رات کام کر رہے ہیں۔ جب آفت آئی تو وزیر اعلیٰ گراؤنڈ زیرو پر رہے اور ضروری خدمات کو بحال کیا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت نے آفت سے متاثرہ افراد کے لیے خصوصی امدادی پیکج کا اعلان کیا ہے، جس میں معاوضے کی رقم میں تاریخی اضافہ کیا گیا ہے۔ اس خصوصی پیکیج سے متاثرہ خاندانوں کو ضروری امداد فراہم کی گئی ہے، جس کے لیے انہوں نے وزیر اعلیٰ سے اظہار تشکر کیا۔
وزیر اعلیٰ کے سیاسی مشیر سنیل شرما نے کہا کہ وزیر اعلیٰ کے طور پر حلف لینے کے بعد ٹھاکر سکھویندر سنگھ سکھو نے عوامی بہبود کی کہانی لکھنا شروع کی اور ریاست کے یتیم بچوں کے لیے وزیر اعلیٰ سکھ آشرے یوجنا شروع کیا۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر نے اپنی صحت کی پرواہ کئے بغیر رات گیارہ بجے تک مسلسل عہدیداروں کے ساتھ میٹنگ کی اور ریاست کی ترقی کے منصوبے بنائے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست کی بگڑتی ہوئی معاشی حالت اور مرکز کی طرف سے کوئی مدد نہ ہونے کے باوجود آفت سے متاثرہ لوگوں کے لیے خصوصی امدادی پیکج لایا گیا۔

Related posts

نوجوان طاقت وکست بھارت کی بنیادہے:مودی

Siyasi Manzar

13/7 ممبئی سلسلہ وار بم دھماکہ معاملہ

Siyasi Manzar

Bihar Special Status:وزیر اعظم مودی نے پھرکیوں وعدہ کیاتھا…، خصوصی درجہ کو لے کر بہار میں سیاست تیز تیجسوی یادو نے مرکز کو گھیر ا

Siyasi Manzar

Leave a Comment