Siyasi Manzar
مضامین

"خود آگہی سے اتحاد تک”

سید واصف اقبال گیلانی
بہار شریف، نالندہ

نہیں سوچتے۔ آج مسلمانوں کو جن مصائب کا سامنا ہے وہ غلط فہمی، امتیازی سلوک اور ظلم و ستم پر مشتمل ہے۔ دنیا کے بہت سے حصوں میں، خاص طور پر ہندوستان میں، محض عقیدے کا اظہار نفرت اور تشدد کا باعث بن سکتا ہے۔ شکوک اور خوف کی فضا پروان چڑھی ہے، اور مسلمانوں پر انتہا پسندی اور دہشت گردی کا ‘جھوٹا الزام’ لگایا جاتا ہے، گروہوں اور افراد کے تنوع کو نظر انداز کیا گیا ہے جو اسلام کا نچوڑ ہیں۔ درحقیقت مسلمانوں کے پاس امن، مہربانی اور انصاف کا حقیقی معیار ہے۔
یہ منفی ماحول خاص طور پر ہمارے نوجوانوں کے دل و دماغ کو متاثر کرتا ہے۔ ایمان کی بنیادوں کو ہلا کر ان کے اندر شکوک و شبہات پیدا ہونے لگتے ہیں۔ ہمیں کیوں نشانہ بنایا جاتا ہے، نظر انداز کیا جاتا ہے، غلط سمجھا جاتا ہے؟ سوالات اٹھائے جاتے ہیں. "کیا ہمارے عقائد میں کوئی بنیادی خامی ہے؟” دل کی گہرائیوں میں گونجتے یہ سوالات شناخت اور عزم کے بحران کا باعث بن سکتے ہیں۔ اس "مختلف ہونے” کو چھوڑنے کا لالچ جو اس طرح کی دشمنی کو راغب کرتا ہے، بڑھتا ہے، اور آج کی سیاسی جنگ سے بچنے کا فتنہ بن جاتا ہے۔
آج بھی ان طوفانی حالات میں قرآن کی آیات چراغ کی طرح روشن ہیں جو ہمیں سکون اور رہنمائی فراہم کرتی ہیں۔ وہ ہمیں نہ صرف یہ یاد دلاتے ہیں کہ ایمان کا راستہ محض آسانی کے میدانوں سے گزرنا نہیں ہے بلکہ مصیبت کی وادیوں اور آزمائش کی چوٹیوں پر ایک مشکل چڑھائی ہے۔ اس تاریکی کے درمیان قرآن ہماری رہنمائی اور یاددہانی کر رہا ہے کہ مشکلات ناگہانی آفات نہیں ہیں بلکہ ایمان کے سفر کا لازمی حصہ ہیں۔ بے شک مسلمان آج کی دنیا میں مسائل سے دوچار ہیں لیکن ان مسائل سے نمٹنے کے لیے قرآن کی حکمت اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام کی مثالی زندگیوں سے رہنمائی حاصل نہیں کرتے تاکہ ہم اپنے اندر عزم اور استقامت پیدا کر سکیں۔
اگرچہ قرآن و سنت آگے بڑھنے کا راستہ دکھا سکتے ہیں لیکن ہم، آج کے مسلمان، مسائل کے حل کی بجائے مسائل پر زیادہ توجہ دیتے ہیں۔ سورہ عنکبوت میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ کیا لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ وہ یہ کہہ کر چھوڑ دیے جائیں گے کہ ہم ایمان لے آئے ہیں اور ان کی آزمائش نہیں کی جائے گی۔ ہمیں جن آزمائشوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے وہ سزا نہیں بلکہ ہمارے ایمان کو بہتر بنانے، اپنے عزم کو مضبوط کرنے اور مضبوط یقین کے ساتھ مشکلات کے گڑھے سے نکالنے کے مواقع ہیں۔
تاریخ گواہ ہے کہ انبیاء علیہم السلام نے ہمیشہ دشوار گزار راستوں پر قدم رکھا۔ دہکتی ہوئی بھٹی میں حضرت ابراہیم علیہ السلام کا صبر اور فریب و خیانت میں یوسف علیہ السلام کی پختگی یہ سب مثالیں ہیں کہ آزمائش ایمان کی تکمیل کا جواز ہے۔ ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو مکہ مکرمہ میں اس قدر ظلم و ستم، جان کا خطرہ، صحابہ کرام کی تذلیل اور پیغام حق کی بہتان تراشی برداشت کرنی پڑی، لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم اللہ تعالیٰ صبر و استقلال کا پیکر رہے۔ مکہ کا دور محض ایک امتحان نہیں تھا، یہ ایک نئی مسلم اخوت کے قیام کی جڑ تھی۔ وہاں مصیبتوں میں بھائی چارے کے بندھن مضبوط ہوئے، ایمان کے اصول دل میں کندہ ہوئے اور مسلمانوں نے نماز میں سکون، قرآن سے ہمت اور باہمی تعاون سیکھا۔
جدید دنیا میں مسلمانوں کے لیے زندگی مشکل ہوتی جا رہی ہے۔ آج کے مسائل جیسے اسلاموفوبیا، عقیدے اور جدیدیت کے درمیان توازن اور بین المذاہب مکالمے کی کمی مسلمانوں کے لیے ایک بڑا امتحان ہے۔ اسی جذبہ ، غیر متزلزل یقین اور بے مثال قوت کے ساتھ ہی ہم 21ویں صدی کے مسلمانوں کو موجودہ مسائل کا مقابلہ کرنا ہے۔ آج جس چیز کی ہمیں سب سے زیادہ ضرورت ہے وہ اسلام پر ایمان لانے کی ہے اور یہ یاد رکھنے کی ضرورت ہے کہ ہمارے اردگرد کی تاریکی روشنی کو نہیں بجھا سکتی اور بلا شبہ ایمان کی آواز شک کے بادلوں میں گم نہیں ہو سکتی۔ اس حقیقت کے باوجود کہ اسلام میں ثابت قدمی کا راستہ کبھی کبھار مشکل ہو سکتا ہے، نتیجہ اور انعام غیر معمولی خوبصورتی اور لامتناہی سکون پر مشتمل ہے۔
ہمیں قرآن کی تعلیمات پر عمل کرتے ہوئے، سیرت نبوی کو اپنی زندگیوں میں شامل کرکے، اور ایک دوسرے کا ساتھ دے کر ان مسائل کا مقابلہ کرنا چاہیے۔ ہمیں اسلامو فوبیا کے خلاف بولنا چاہیے، عقیدے اور جدیدیت کے درمیان توازن قائم کرنا چاہیے، اور بین المذاہب مکالمے کو فروغ دینا چاہیے۔ اسلامو فوبیا ایک سنگین مسئلہ ہے جو دنیا بھر میں مسلمانوں کے خلاف نفرت اور تعصب کو جنم دے رہا ہے۔ اس سے نمٹنے کے لیے دوطرفہ حکمت عملی کی ضرورت ہے۔

پہلی طرف، ہمیں اسلامو فوبیا کے بارے میں جھوٹ اور غلط فہمیوں کا مقابلہ کرنا ہوگا۔ ہمیں مسلمانوں کی معتدل آوازوں کو بلند کرنا ہوگا اور ہمارے عقائد اور اعمال کی وسعت کو ظاہر کرنا ہوگا۔ ہمیں مسلم افراد کی سماجی خدمات، مختلف شعبوں میں کامیابی اور امن، عدل و مہربانی کے اصولوں پر مبنی زندگی کی کہانیاں سنانی ہوں گی۔
دوسری طرف، ہمیں اپنے اندر طاقت اور حوصلہ پیدا کرنا ہوگا۔ اسلامو فوبیا کا سامنا کرنا ہمارے اعتماد اور احساسِ محبت کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔ لیکن یہ ضروری ہے کہ ہم یاد رکھیں کہ اسلامو فوبیا دراصل ظلم کرنے والے کے تعصب کا عکس ہے، نہ کہ ہمارے اندر یا ہمارے عقیدے میں کوئی کمی ہے۔ ہمیں اسلامی تاریخ کے گنجینے سے طاقت حاصل کرنی چاہیے، جہاں بے شمار افراد نے ظلم و ستم کا مقابلہ کیا اور اپنے عقائد میں اور زیادہ پختگی پائی۔
اس کے علاوہ، ہمیں یہ بھی یاد رکھنا چاہیے کہ اسلام خود اسلامو فوبیا کا بہترین علاج ہے۔ قرآن مجید، سورہ حجرات کی آیت 13 میں ارشاد ہے، "یٰایُّھَا النَّاسُ إِنَّا خَلَقْنَاکُمْ مِّن ذَکَرٍ وَأُنثٰى وَجَعَلْنَاکُمْ شَعْبًا وَقَبَائِلَ لِتَعَارَفُوا إِنَّ أَکْرَمَکُمْ عِنْدَ اللَّهِ أَتْقَاکُمْ إِنَّ اللَّهَ عَلِیمٌ خَبِیرٌ۔” (اے لوگو! ہم نے تمہیں ایک ہی مرد اور عورت سے پیدا کیا ہے اور تمہارے خاندان اور قومیں بنائی ہیں تاکہ تمہیں آپس میں پہچان ہو، بے شک زیادہ عزت والا تم میں سے اللہ کے نزدیک وہ ہے جو تم میں سے زیادہ پرہیزگار ہے، بے شک اللہ سب کچھ جاننے والا خبردار ہے۔) یہ آیت انسانیت کی فطری وحدت اور تنوع پر زور دیتی ہے، اور ہمیں اختلافات کو تسلیم کرنے اور ان کا احترام کرنے کی تلقین کرتی ہے۔ یہ ہمیں لیبلز اور نمونوں سے بلند ہو کر انسانی تجربے کی رنگینی کو اس کی متنوع شکلوں میں قبول کرنے کا درس دیتی ہے۔
اسلامو فوبیا کے ساتھ رہنا آسان نہیں ہے اور اس کے لیے مستقل چوکسی، مضبوط عزم اور حوصلے کی ضرورت ہے۔ مسلمانوں کو درپیش پیچیدہ مسائل کا یہ صرف ایک پہلو ہے۔ ہمیں ایمان اور جدیدیت کے درمیان نازک توازن پیدا کرنے، مسلمانوں کے درمیان اتحاد کی ضرورت اور اپنی برادریوں میں مثبت تبدیلی کی حوصلہ افزائی کے لیے مسلم معاشرہ کے فطری کردار کی فوری ضرورت کا گہرائی سے جائزہ لینا چاہیے۔ یاد رہے کہ علامہ محمد اقبال نے ایک پیشین گوئی کی تھی:
نہ سمجھوگے تو مِٹ جاوگےاے ہندوستاں والوں
تمھاری داستان تک بھی نہ ہوگی داستانوں میں
اس لیے موجودہ وقت انتہائی اہم ہے اور مسلمانوں کو ہر سطح پر متحد ہونے کا خواہاں ہے۔ آگے کا راستہ ایمان، عقل اور باہمی احترام کی روشنی میں ہی ممکن ہے۔
ایک فطری سوال پوچھا جا سکتا ہے کہ کیا ہندوستان کی موجودہ سیاسی صورتحال میں، خاص طور پر ہندو سماج کے بعض طبقات کی سازشوں اور حملوں کے پیش نظر، مسلم اتحاد ناگزیر ہے۔ تاہم، یہ یاد رکھنا ضروری ہے کہ پورے گروپ کے بارے میں عمومیت نقصان دہ ہو سکتی ہے اور حقیقت کی درست عکاسی نہیں کر سکتی۔ اس کے بجائے، ایک زیادہ موثر اور اخلاقی حکمت عملی یہ ہے کہ "ہم بمقابلہ ان” کے درمیان تفرقہ انگیز انداز اپنانے کے بجائے تعمیری بین المذاہب مکالمے اور افہام و تفہیم کو فروغ دیا جائے۔
بڑھتی ہوئی سیاسی کشمکش کے درمیان مسلم معاشرہ کے درمیان اتفاق رائے کی ضرورت ناگزیر ہو گئی ہے۔ چیلنجوں پر قابو پانے کے لیے نہ صرف طاقت بلکہ مختلف نقطہ نظر کی قدر سے بھی آگاہ ہونا ضروری ہے۔ یہ بحث مسلم اتحاد کو مضبوط بنانے اور باہمی احترام پر مبنی معاشرہ بنانے کی حکمت عملیوں کی نشاندہی کرتی ہے۔
قرآن کریم ایمان اور اتحاد کی اہمیت پر زور دیتا ہے۔ سورہ حجرات کی آیت نمبر 13 میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ بنی نوع انسان کو مرد اور عورت سے پیدا کیا گیا اور مختلف قوموں اور قبیلوں میں تقسیم کیا گیا تاکہ وہ ایک دوسرے کی مدد کر سکیں۔ پہچان سکتے ہیں یہ الفاظ اختلافات کو کم کرنے کے بجائے ان کی شناخت اور تعریف کی حوصلہ افزائی کرکے اتحاد کو فروغ دیتے ہیں۔ بین المذاہب مکالمے کے لیے پیغمبر اسلام کی وابستگی، جس کی مثال حدیبیہ کے معاہدے سے ملتی ہے، ہمارے لیے ایک قابل قدر رہنما اصول ہے۔ ان کا امن اور احترام کا پیغام مذہبی حدود سے بالاتر ہے اور آج کے معاشرے میں تعاون کا نمونہ پیش کرتا ہے۔
یہ ضروری ہے کہ ہم ایسے پل بنائیں جو اختلافات کو ختم کر سکیں۔ بین المذاہب مکالمے میں کھل کر حصہ لینا ذاتی تجربات کو بانٹنے، فعال سننے، اور ہمدردانہ روابط استوار کرنے میں مددگار ہے۔ ثقافتی تبادلے، بین المذاہب کھیلوں کے ٹورنامنٹ، اور مشترکہ معاشرہ پروجیکٹ مسلمانوں اور دیگر معاشرہ کے درمیان روابط کو فروغ دینے کے مواقع فراہم کرتے ہیں۔ یہ ضروری ہے کہ مسلم زیر قیادت میڈیا آؤٹ لیٹس کو فروغ دیا جائے جو منفی دقیانوسی تصورات کو چیلنج کرتے ہیں اور مثبت کہانیوں کو اجاگر کرتے ہیں۔
مسلم معاشرہ کی اندرونی صلاحیت کو مضبوط کرنے سے ان کی مختلف چیلنجوں کا مقابلہ کرنے کی طاقت بڑھ جاتی ہے۔ مذہبی وابستگی سے قطع نظر معیاری تعلیم تک مساوی رسائی کو فروغ دینا تنقیدی سوچ کی مہارتوں کو فروغ دینے اور بااختیار بنانے میں ایک اہم قدم ہے۔ مائیکرو فنانس کے اقدامات، ہنر مندی کے فروغ کے پروگرام، اور کاروباری تربیت کی فراہمی کے ذریعے، ہم اقتصادی ترقی کو فروغ دے سکتے ہیں اور معاشرہ کے لوگوں کو خود انحصار اور خود انحصار بننے میں مدد دے سکتے ہیں۔ ذمہ دارانہ اور باخبر سیاسی شرکت کو فروغ دینا مسلمانوں کو انتخابی عمل میں فعال طور پر حصہ لینے اور اپنے مفادات کی مؤثر وکالت کرنے کی اجازت دیتا ہے۔
ہندوستان میں مسلمانوں کا مستقبل کا اتحاد ایمان، افہام و تفہیم اور طاقت کے باہمی تعلق سے پیدا ہونے والے اتحاد پر منحصر ہے۔ اپنی مشترکہ انسانیت کو اپنا ہتھیار بنا کر، کھلے ذہن کے ساتھ مختلف نقطہ نظر کو قبول کرتے ہوئے، اور اندرونی طاقت کا استعمال کرتے ہوئے، ہم ایک ایسا مستقبل بنا سکتے ہیں جہاں ہندوستانی سماج کے تمام طبقات احترام اور ہم آہنگی کے ماحول میں پروان چڑھیں۔
اس لیے اتحاد اور طاقت کو فروغ دینے کے لیے ایک جامع حکمت عملی کی ضرورت ہے۔ اس عمل میں مذہبی عقائد سے تحریک حاصل کرنا، دوسرے گروہوں کے ساتھ تعلقات کو مضبوط کرنا، اور مسلم معاشرہ کے اندر خود انحصاری کو فروغ دینا شامل ہے۔ مثبت عمل اور بین المذاہب افہام و تفہیم پر زور دے کر، ہندوستانی مسلمان موجودہ چیلنجوں سے مؤثر طریقے سے نمٹ سکتے ہیں اور اپنے اور تمام گروہوں کے لیے ایک روشن مستقبل کی راہ ہموار کر سکتے ہیں۔
امت مسلمہ، ایک متنوع اور وسیع برادری کو جغرافیائی حدود سے ماورا چیلنجز کا سامنا ہے۔ اندرونی اختلافات اور اتحاد کا فقدان مایوس کن ہیں، ہماری ترقی میں رکاوٹ ہیں۔ یہ خود شناسی ہمیں اپنے آپ پر الزام لگانے کے بجائے تعمیری تبدیلی کی صلاحیت کا ادراک کرنے کی یاد دلاتا ہے۔ ہماری معاشرہ میں اتحاد کی کمی نے ہمیں بیرونی دباؤ کا شکار بنا دیا ہے۔ امت کے اندر محسوس کی جانے والی سختی کے بارے میں تشویش کا اظہار ہماری معاشرہ کی فلاح و بہبود کے لیے مخلصانہ فکر سے ہوتا ہے۔ یہ تسلیم کرنا ضروری ہے کہ اتحاد کا مطلب یہ نہیں ہے کہ سب ایک ہیں، بلکہ یہ کہ ایک مشترکہ مقصد اور باہمی احترام ہے۔
یہ تنقید ہمارے اسلامی اصولوں کی پاسداری پر بھی لاگو ہوتی ہے۔ قرآن اور شریعت اخلاقی رہنما ہیں، ہمارے رویے اور تعلقات کی رہنمائی کرتے ہیں۔ لیکن ان اصولوں پر عمل درآمد نہ ہونے سے اندرونی کشمکش جنم لے رہی ہے۔ افراد کو خود کی دریافت کا سفر شروع کرنا چاہیے اور اپنے مذہبی عقائد کے ساتھ گہرا تعلق استوار کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔ اپنے لوگوں، خاندانوں اور برادریوں کے لیے محبت کی کمی کا حوالہ ہمیں ہمدردی اور مہربانی کو فروغ دینے کی اہمیت کی طرف راغب کرتا ہے۔ ہماری معاشرہ کے اندر مضبوط تعلقات استوار کرنا وسیع تر امت کے اندر گہری ہم آہنگی کی بنیاد بنانے کا ایک اہم پہلا قدم ہے۔
بیرونی خطرات کے پیش نظر بظاہر غیر فعال رویے کا ذکر ایک اہم مسئلہ کو اجاگر کرتا ہے۔ دوسروں پر بے بسی سے انحصار کرکے اپنے مسائل کا حل تلاش کرنا مہذ ایک احمقانہ رویہ ہو سکتا ہے۔ امت مسلمہ کو متحد ہو کر روشن، مضبوط اور مثبت مستقبل کے لیے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔ تبدیلی کے لیے بیرونی عوامل پر انحصار کرنے کے بجائے ہمیں اپنی قسمت کا فیصلہ خود کرنا چاہیے۔ آج کے مسائل، جن کے آگے خطرات ہو سکتے ہیں، منصوبہ بندی اور حکمت عملی بنانے، فعال کردار ادا کرنے اور سب سے اہم ناانصافیوں کے خلاف مزاحمت کرنے پر زور دیتے ہیں۔ یہ بیان جبر یا تشدد کو فروغ دینے کے بجائے اجتماعی اور حکمت عملی کے خلاف مزاحمت کی وکالت کرتا ہے۔ تعلیم، مکالمہ اور تعاون ان مسائل کو حل کرنے کے موثر طریقے ہو سکتے ہیں۔
حکمت عملیوں کو امت کے اندر تعلیم کو فروغ دینے، تنقیدی سوچ اور ہمارے عقیدے کی جامع تفہیم کے قابل علم سے آراستہ کرنے پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے۔ ثقافتی، نسلی یا فرقہ وارانہ اختلافات کے باوجود، متنوع سماجی اراکین کے درمیان جامع اور تعمیری رابطے کو فروغ دینا، افہام و تفہیم اور اتحاد کے لیے ضروری ہے۔ عالمی رابطہ اور تعاون بھی ضروری ہے۔ امت مسلمہ کو معاشی و سماجی مسائل اور سیاسی عدم استحکام سمیت مختلف مسائل کا سامنا ہے۔ اپنے خاندانوں، اپنے معاشرے اور قومی سطح کے اندر رابطے کے ذریعے، ہم ان مسائل کو منظم طریقے سے حل کرنے کے لیے اپنی مشترکہ طاقتوں کو مؤثر طریقے سے استعمال کر سکتے ہیں۔
یہاں یہ نتیجہ اخذ کیا جا سکتا ہے کہ امت مسلمہ کو متحد کرنے کے لیے خود آگاہی، ہمدردی اور ایک فعال کردار ضروری ہے۔ مشترکہ اقدار کو اپناتے ہوئے، اسلامی اصولوں پر عمل پیرا ہو کر، اور اپنی اجتماعی تقدیر کی ذمہ داری لے کر، ہم ایک ایسا مستقبل تشکیل دے سکتے ہیں جو اسلام کے حقیقی جوہر کی عکاسی کرتا ہو، یعنی اتحاد، انصاف اور احسان کا مذہب۔ یہ ہماری اجتماعی ذمہ داری ہے کہ ہم ہندوستان میں مسلمانوں کے روشن مستقبل کو یقینی بنائیں اور عالمی برادری میں ایک مثبت کردار ادا کریں جس سے ہم کسی قیمت پر انکار نہیں کر سکتے۔ اللہ سبحانہ وتعالی ہم لوگوں کو مزید مشکل میں جانے سے پہلے متحد ہونے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین

Related posts

کیا یہودی اور عیسائی ایک ہیں؟

Siyasi Manzar

ایسا کہاں سے لائوں کہ تجھ سا کہیں جسے Qari Mushtaq Ahmed

Siyasi Manzar

حضرت عیسیٰ علیہ السلام اللہ کے بیٹے نہیں، اللہ کے برگزیدہ رسول اور نبی ہیں

Siyasi Manzar

Leave a Comment