Siyasi Manzar
راجدھانی

بی جے پی اجتماعی انصاف کے ساتھ سب کا وکاس پر یقین رکھتی ہے: جمال صدیقی

مشن 2024 کی تیاری میں جٹی بی جے پی، اقلیتوں تک رسائی کے لیے تیار کیا ماسٹر پلان ، بی جے پی نے اقلیتی برادری تک پہنچنے کے لیے بڑی حکمت عملی کا آغاز کیا پی ایم مودی اور جے پی نڈا کمان سنبھالیں گے، بی جے پی اقلیتی محاذ اقلیتی "سنیہا سمواد” پروگرام منعقد کرے گا

دہلی :(پریس ریلیز) بھارتیہ جنتا پارٹی نے 2024 کے لوک سبھا انتخابات کے لیے اپنی تیاریاں تیز کر دی ہیں۔ بی جے پی اقلیتوں تک پہنچنے اور انہیں آپس میں جوڑنے کے لیے اقلیتی سنیہا سموادپروگرام شروع کرنے جا رہی ہے۔بی جے پی اقلیتی مورچہ کے نیشنل میڈیا انچارج فیصل ممتاز نے دہلی میں بی جے پی ہیڈکوارٹر میں بی جے پی اقلیتی محاذ کے قومی صدر جمال صدیقی سے ملاقات کی، انھوں نے صوفی سمواد میں مودی پر تبادلہ خیال کیا۔ مترا، "شکریہ مودی جی” مہم اور مورچہ کے آئندہ پروگرام، اقلیتی "سنیہا سمواد” مہم میں فاؤنڈیشن کے قومی صدر ڈاکٹر گڈو چوہان بھی موجود تھے۔بی جے پی اقلیتی مورچہ کے قومی صدر جمال صدیقی نے میڈیا کو بتایا کہ اقلیتی "سنیہا سمواد” مہم کا انعقاد بی جے پی اقلیتی مورچہ کرے گا۔ اس کا افتتاح پارٹی کے قومی صدر جے پی نڈا کریں گے۔ بی جے پی کے قومی اقلیتی محاذ کے صدر، کلسٹر اقلیتی محاذ کی ٹیم، ریاستی اقلیتی محاذ کی ٹیم، لوک سبھا انتخابات کے ریاستی انچارج، ریاستی اسمبلیوں کے انچارج، اسمبلی ٹیم، منڈل اور بوتھ سطح پر پارٹی کے عہدیدار اس اقدام کا حصہ ہوں گے۔ وزیر اعظم نریندر مودی پروگرام کے تحت قومی سطح کی میٹنگیں بھی کریں گے۔ تاہم ملاقات کی تاریخ ابھی طے نہیں ہوئی۔ اس پروگرام میں اقلیتی برادری سے تعلق رکھنے والی کھیلوں سے تعلق رکھنے والی شخصیات، متاثر کن افراد اور خواتین سے استفادہ کرنے والوں کے ساتھ بات چیت شامل ہوگی۔ سنیہا سمواد کا مقصد اقلیتی برادری کو متاثر کرنے اور ان کو حساس بنانے اور لوک سبھا انتخابات 2024 سے پہلے ایک پرامن ماحول بنانے کے لیے، بی جے پی اقلیتی مورچہ اس بڑی مشق کا آغاز کرنے جا رہا ہے۔ اس مہم میں وزیر اعظم نریندر مودی کے منتر ’’ریفارم پرفارم اینڈ ٹرانسفارم‘‘ کو فروغ دیا جائے گا، پارٹی کے اقلیتی محاذ کے کارکنان لوگوں تک یہ بات پھیلائیں گے کہ مودی حکومت اپنی اسکیموں کو نافذ کرنے میں امتیازی سلوک نہیں کرتی، فرنٹ کے کارکنان جن دھن کے بارے میں معلومات فراہم کریں گے۔ یوجنا، اجولا یوجنا، شوچلے یوجنا، کسان سمان یوجنا، پردھان منتری آواس یوجنا، بیٹی پڑھاؤ بیٹی پڑھاؤ وغیرہ اور لوگوں کو بتانا کہ حکومت نے ان اسکیموں کو نافذ کرنے میں کبھی امتیازی سلوک نہیں کیا۔ یہ ون انڈیا، گریٹر انڈیا کے نظریے کے ذریعے حب الوطنی، قوم پرستی اور آپس میں جڑے ہوئے نظریات کو بھی فروغ دے گا۔ اس سے اس حقیقت کو بھی فروغ ملے گا کہ بی جے پی اجتماعی انصاف کے ساتھ کسی کی خوشنودی کے بجائے سب کی ترقی پر یقین رکھتی ہے۔

Related posts

’لائحہ عمل کی پیچیدگیوں کی تلاش‘‘ کے موضوع پر لیکچر کا انعقاد

Siyasi Manzar

مرکزی بی جے پی حکومت کے اقتدار کی بھوک نے آج جموں کشمیر کو تباہ کردیا ہے

Siyasi Manzar

Maulana Arshadmadani Jamiat Ulema-e-Hind: نفرت اورتفریق کی یہ سیاست ملک کو ترقی نہیں تباہی کے راستہ پر لے جانے والی ہے: مولانا ارشدمدنی

Siyasi Manzar

Leave a Comment